اسمائے حسنیٰ کی فضیلت

Views: 74
Avantgardia





مولانا علی احمد صاحب قاسمی
قالَ رَسُولُ اللّٰہِ ﷺ ا8نَّ لِلّٰہِ تَعالٰی تِسْعَۃٌ وَّ تِسْعُوْنَِ اِسْماً مَنْ اَحْصَا ھَا دَخَلَ الْجَنَّۃَ (ترمذی، ج؍ ۲، ص؍ ۸۸)
ترجمہ: رسول اکرم ﷺ نے فرمایا کہ بے شک اللہ تعالیٰ کے ننانوے نام ہیں جس اس کو محفوظ کیا وہ جنت میں داخل ہوگا۔
اس حدیث شریف میں اللہ تعالیٰ کے یہ ننانوے نام صفاتی ہیں اور ذاتی نام تو اللہ ہی ہے۔
اس حدیث پاک کی مراد یہ نہیں کہ اللہ جل شانہ کے صفاتی نام ان کے علاوہ نہیں؛ بلکہ صرف مقصود یہ ہے کہ ان کو یاد کرینا دخول جنت کا سبب ہے۔
حافظ ابن العربی ؒ نے یہ نقل فرمایا ہے کہ اللہ تعالیٰ کے ہزار نام ہیں اور یہ بھی کم ہیں حقیقی تعداد اللہ ہی جانتا ہے ۔ رسول اللہ ﷺ نے ارشاد فرمایا کہ اللہ تعالیٰ کے اسمائے حسنیٰ جن کے ساتھ دعا مانگنے کا ہمیں حکم دیا گیا ہے ننانوے ہیں جو شخص ان کا احاطہ کرے گا یعنی یاد کرے گا اور پڑھتا رہے گا وہ جنت میں داخل ہوگا۔ (تحفۂ دنیا و آخرت، ص۲۳۱)
اسمائے حسنیٰ کے فوائد
جو شخص جمعہ کے دن نماز جمعہ سے قبل پاک صاف ہوکر تنہائی میں دو سو مرتبہ اس نام کو پڑھے گا تو اس کی ہر مصیبت آسان ہوجائے گی اور جو لاعلاج مریض بکثرت یا اللہ کا ورد رکھے اس کے بعد شفا کی دعا مانگے اس کو شفائے کاملہ نصیب ہوگی۔ (تحفۂ دنیا و آخرت ص؍ ۲۳۵)۔
اسمائے حسنیٰ کے یاد کرنے اور پڑھنے کی برکت سے دخول جنت کی بشارت آئی ہے اور ان کے توسل سے دعا مانگنا موجب قبولیت ہے (ترمذی)
نماز فجر کے بعد ایک پڑھ کر دعا مانگنا بہت مفید اور موجب خیرو برکت ہے۔ (گلشن یوسفی، ص۷۵)۔
عن أبِیْ ھُرَیْرَۃَؓ قالَ : لِلّٰہِ تِسْعَۃٌ وَّ تِسْعُونَ اِسْماً مِءَۃٌ ا8لَّا وَاحِدَاً لَا تَحْفَظُھُا أحَدٌ ا8لَّا دَخَلَ الْجَنَّۃَ وَھُوَ وِتْرٌ یُحِبُّ الْوِتْرَ
(بخاری، ج؍۲ِ ص۹۴۹)
حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ اللہ تعالیٰ کے ننانوے نام ہیں سو میں ایک کم جو شخص بھی ان کو یاد کرے گا جنت میں داخل ہوگا۔ اللہ تعالیٰ طاق ہے اور طاق کو پسند کرتا ہے ۔
ان ناموں کو پڑھ کر جو دعا کی جائے وہ قبول ہوتی ہے خود باری تعالیٰ کا ارشاد ہے کہ
لِلّٰہِ الْاَسْمَاءُ الْحُسْنیٰ فَادْعُوْ بِھا۔
اور اللہ تعالیٰ کے نہایت اچھے نام ہیں ان کے ذریعے اللہ سے مانگا کرو ان کو اسمائے حسنیٰ کہا جاتا ہے۔
اسمائے حسنیٰ پڑھنے کا طریقہ
جب ان اسمائے حسنیٰ کی تلاوت کرنا چاہے تو اس طرح شروع کرے کہ
ھو اللہ الذی لا الٰہ الا ھو الرحمٰن الرحیم
آخر تک پڑھے۔ ہر اسم کے آخر ی حرف پر پیش پڑھیں اور دوسرے اسم سے ملادے جس نام پر سانس لینے کے لیے رُ کو اس وقت نہ ملائے اور دوسرا نام ال سے شروع کریں اگر کسی ایک کا وظیفہ پڑھیں تو شروع میں یا حرف ندا کا اضافہ کریں مثلا الرحمان کا وظیفہ پڑھنا ہے تو یا رحمان پڑھیں یا الرحمان پڑھیں۔ (تحفۂ دنیا و آخرت، ص؍ ۳۳۳)

اسمائے حسنیٰ
ھُوَ الْلّٰہُ الَّذِیْ لَا ا8لٰہَ ا8لَّا ھُوَ
الرَّحْمٰنُ
الرَّحِیْمُ
اللہ وہی ہے جس کے علاوہ کوئی عبادت کے لائق نہیں
بڑا مہربان
نہایت رحم والا
الْمَلِکُ
الْقُدُّوْسُ
السَّلَامُ
الْمُؤْمِنُ
بادشاہ
نہایت پاکیزہ
سلامتی والا
امن دینے والا
الْمُھَیْمِنُ
الْعَزِیْزُ
الْجَبَّارُ
الْمُتَکَبِّرُ
حفاظت کرنے والا
ہر چیز پر غلبہ رکھنے والا
زبردست
بڑائی والا
الْخَالِقُ
الْبَارِئُ
الْمُصَوِّرُ
الْغَفَّارُ
پیدا کرنے والا
ٹھیک ٹھیک بنانے والا
صورت بنانے والا
بخشنے والا
الْقَھَّارُ
الْوَھَّابُ
الرَّزَّاقُ
الْفَتَّاحُ
غلبہ رکھنے والا
بہت دینے والا
رزق کو دینے والا
دروازے کھولنے والا
الْعَلِیْمُ
الْقَابِضُ
الْبَاسِطُ
الْخَافِضُ
زیادہ جاننے والا
روزی تنگ کرنے والا
روزی کشادہ کرنے والا
پست کرنے والا
الرَّافِعُ
الْمُعِزُّ
الْمُذِلُّ
السَّمِیْعُ
بلند کرنے والا
عزت دینے والا
ذلت دینے والا
سننے والا
الْبَصِیْرُ
الْحَکَمُ
الْعَدْلُ
اللَّطِیْفُ
دیکھنے والا
فیصلہ کرنے والا
انصاف کرنے والا
مہربان
الْخَبِیْرُ
الْحَلِیْمُ
الْعَظِیْمُ
الْغَفُوْرُ
خبر رکھنے والا
بہت بردبار
بڑی عظمت والا
بہت بخشنے والا
الشَّکُوْرُ
الْعَلِیُّ
الْکَبِیْرُ
الْحَفِیْظُ
قدر دانی کرنے والا
بلند مرتبہ والا
سب سے بڑا
حفاظت کرنے والا
الْمُقِیْتُ
الْحَسِیْبُ
الْجَلِیْلُ
الْکَرِیْمُ
قوت دینے والا
کافی ہونے والا
عظیم القدر
کرم کرنے والا
الرَّقِیْبُ
الْمُجِیْبُ
الْوَاسِعُ
الْحَکِیْمُ
نگہبان
قبول کرنے والا
وسیع کرنے والا
بڑا حکیم
الْوَدُوْدُ
الْمَجِیْدُ
الْبَاعِثُ
الشَّھِیْدُ
محبت کرنے والا
بزرگی والا
دوبارہ زندہ کرنے والا
ہر چیز پر گواہ
الْحَقُّ
الْوَکِیْلُ
الْقَوِیُّ
الْمَتِیْنُ
ثابت و برحق
کارساز
طاقت والا
نہایت قوت والا
الْوَلِیُّ
الْحَمِیْدُ
الْمُحْصِی
الْمُبْدِئُ
سرپرست
تعریف کے لائق
شمار کرنے والا
نئی چیز بنانے والا
الْمُعِیْدُ
الْمُحْییِ
الْمُمِیْتُ
الْحَیُّ
دوبارہ زندگی دینے والا
زندہ رکھنے والا
موت دینے والا
دائمی زندہ رہنے والا
الْقَیُّوْمُ
الْوَاجِدُ
الْمَاجِدُ
الْوَاحِدُ
قائم رکھنے والا
پانے والا
بزرگی والا
اپنی ذات میں اکیلا
اَلأحَدُ
الصَّمَدُ
الْقَادِرُ
الْمُقْتَدِرُ
صفات میں یکتا
سب سے بے نیاز
قدرت والا
بڑی قدرت والا
الْمُقَدِّمُ
الْمُؤَخِّرُ
الْاَوَّلُ
الْاٰخِرُ
آگے بڑھانے والا
پیچھے رکھنے والا
سب سے پہلا
سب سے آخر
الظَّاھِرُ
الْبَاطِنُ
الْوَالِیُ
الْمُتَعَالُ
صفات سے کھلا ہوا
اپنی ذات سے چھپا ہوا
حاکم و کارساز
بلند و برتر رتبے والا
الْبَرُّ
التَّوَّابُ
الْمُنْتَقِمُ
الْعَفُوُّ
نیک سلوک کرنے والا
بہت توبہ قبول کرنے والا
بدلہ لینے والا
معاف کرنے والا
الرَّءُوْفُ
مَالِکُ الْمُلْکِ
ذُوالْجَلَالِ وَالْاِکْرَامِ
الْمُقْسِطُ
بہت شفقت کرنے والا
سارے جہاں کا مالک
بزرگی و احسان والا
انصاف کرنے والا
الْجَامِعُ
الْغَنِیُّ
الْمُغْنِی
الْمَانِعُ
جمع کرنے والا
ہر چیز سے بے نیاز
آسودہ کرنے والا
روکنے والا
الضَّآرُّ
النَّافِعُ
النُّوْرُ
الْھَادِیُ
نقصان پہنچانے والا
نفع دینے والا
نور بخشنے والا
ہدایت دینے والا
الْبَدِیْعُ
الْبَاقِی
الْوَارِثُ
بلا نمونہ بنانے والا
ہمیشہ باقی رہنے والا
سب کے بعد ہر چیز کا مالک
الرَّشِیْدُ
الصَّبُوْرُ
نیک راہ بتانے والا
بہت تحمل والا




Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *

0

Your Cart