اورنگ زیب عالمگیرؒ


محمد طارق قاسمی لکھیم پوری


ایک    تابندہ    ستارہ    آسمانِ    ہند    کا
جس سے روشن ہوگیا ہرگوشئہ ہندوستاں


تھا ضعیفوں کے  لئے  ابرِ کرم  سے کم نہیں
بہرِ ظلم وجور لیکن، تھا وہ  برقِ  بے  اماں


زندگی  پُرکیف تھی اُس وقت  اہلِ  ہند  کی
گوشے گوشے میں وطن کے تھا مسرت کا سماں


ہو ترحُّم جس کی فطرت ، عدل جس کی شان  ہو 
کیسے  ہو سکتا  ہے  اُس  پر  ظلم  و نفرت کا گماں


کاش  اِس   دورِ ستم   کی  انتہاء  کے   واسطے
پھر  ملے  ہندوستاں  کو  اُس  کے  جیسا حکمراں

 Website with 5 GB Storage

اپنا تبصرہ بھیجیں