جمعیت علماء قدیم شہر ناندیڑ کے زیر اہتمام عظیم الشان اجلاس بعنوان (اگر اب بھی نہ جاگے تو!!!) کا کامیاب انعقاد

Views: 34
Avantgardia

جمعیت علماء قدیم شہر ناندیڑ کے زیر اہتمام ۷۱ /اگست ۹۱۰۲ بروز ہفتہ بعد نماز مغرب فیمس فنکشن ہال میں ایک عظیم الشان جلسہ عام بعنوان ”اگر اب بھی نہ جاگے تو“ کا کامیاب ترین انعقاد حضرت مولانا سیدآصف صاحب ندوی (صدر جمعیت علماء قدیم شہر ناندیڑ) کی زیر نگرانی عمل میں آیا۔اس اجلاس کی سرپرستی حضرت قاری محمد اسعد صاحب صمدی نے کی، جبکہ صدارت حضرت مفتی حذیفہ صاحب قاسمی (ناظم تنظیم جمعیۃعلماء مہاراشٹر)نے کی اور معروف وکیل ایڈوکیٹ تہور خان پٹھان صاحب(مشیر قانونی جمعیت علماء مہاراشٹر)نے بطور مقرر خصوصی شرکت کی۔ جلسہ کا آغاز حافظ محمد جنید (امام مسجد دولہے شاہ رحمن) کی رقت آمیز تلاوت کلام پاک سے ہوا، عزیزم محمد عفان سلمہ (متعلم دارالعلوم کربلا) نے اپنی پرسوز آوازمیں دربار رسالت میں نذرانہئ عقیدت پیش کیا۔ مولانا وسیم حسینی نے جمعیت علماء کی عظمت پر مشتمل بہترین نظم پیش کی۔ ابتدائی خطاب حضرت مفتی ایوب صاحب قاسمی نے فرمایا۔جس میں آپ نے اس بات پر زور دیا کہ موجودہ حالات میں مسلمانان بھارت کو اب ایک نہایت ہی منصوبہ بند اور مضبوط لائحہئ عمل کے تحت کام کرنے کی ضرورت ہے، ڈر نے اورگھبرانے کی ضرورت نہیں ہے، یہ ملک ہمارا ہے اور رہیگا۔ حضرت مولانا مفتی وقایت اللہ صاحب قاسمی (امام و خطیب مکہ مسجد) نے اپنے بصیرت افروز خطاب میں فرمایا کہ خدانخواستہ حالات آئینگے اور انشاء اللہ وہ حالات تبدیل بھی ہونگے لیکن اس کے لئے سب سے پہلے ہمارا تعلق اللہ رب العزت کے ساتھ مضبوط اور اچھا ہونا چاہئے اور اسی کے ساتھ ساتھ ہمیں حقوق العباد کی بھی پوری ادائیگی کرنی ہوگی اور اپنے آپ کو ایک بہترین شہری ثابت کرنا ہوگا۔ حضرت مولانا مظہر الحق صاحب کامل قاسمی (مہتمم دارالعلوم محمدیہ، حمایت نگر) نے نہایت ہی پرمغز اور حقائق پر مشتمل خطاب فرمایا جس میں آپ نے ملک کی آزادی سے لے کر آج تک اس ملک میں اسلام اور مسلمانوں کے خلاف اسلام دشمن عناصر اور دستور مخالف فرقہ پرست عناصر کی جانب سے کی جارہی ریشہ دوانیوں کو پورے دلائل و حوالوں کے ساتھ بیان فرماکر اس بات کی طرف توجہ دلائی کہ ان حالات میں ہم اپنا ازسرنو جائزہ لے کر نئی حکمت عملی کے ساتھ اپنے آپ کو مضبوط کریں۔ مقرر خصوصی جناب ایڈوکیٹ تہور خان نے موضوع سے متعلق اپنی نہایت ہی معلومات افزا تقریر میں کہا کہ موجودہ ناگفتہ بہ حالات سے ڈرنے کی قطعاً ضرورت نہیں ہے بلکہ اب قوم کو ازسرنو حکمت عملی تیار کرکے اس پر عمل کرنا ہوگا، نیز آپ نے اپنی گفتگو میں (UAPA)، اور (NRC) سے متعلق نہایت ہی تسلی بخش معلومات پیش کی، اخیر میں صدر اجلاس حضرت مولانا مفتی حذیفہ صاحب قاسمی نے اپنے خطاب میں پورے عزم و حوصلہ اور حکمت عملی سے کام لینے کی اپیل کی، نیز مولانا نے فرمایا کہ مسلمانوں کو اس وقت ہر حال میں اعلی عصری تعلیم میں آگے بڑھنا ہوگااس لئے کہ آج کے حالات میں تعلیم ہی مسلمانوں کے سارے مسائل کا حل ہے۔ دوران اجلاس جمعیت علماء قدیم شہر کی جانب سے ایڈیٹر ورق تازہ محمد نقی شاداب صاحب کو حکومت مہاراشٹرکے ریاستی مولانا ابوالکلام آزاد صحافتی ایوارڈ حاصل ہونے پر صحافتی خدمات کے اعتراف میں حضرت مفتی حذیفہ قاسمی، ایڈوکیٹ تہور خان پٹھان اور مولانا سید آصف ندوی کے ہاتھوں سپاس نامہ پیش کیا گیا۔ نیز اس موقعہ پر جمعیت علماء قدیم شہر کی جانب سے پچھلے دنوں شہر بھر میں ووٹنگ لسٹ میں ناموں کے اندراج کی چلائی گئی مہم میں بے لوث اور مخلصانہ خدمات انجام دینے والے نوجوانوں (محمد وسیم، سید کلیم الدین، عقیل سر، محمد فاروق، حافظ عبدالمقیت، حافظ بلال الدین، عبدالسمیع، محمد نبیل، محمد فیروز، محمد طالب) کو بھی حضرت مفتی حذیفہ قاسمی کے ہاتھوں سپاس ناموں سے نوازا گیا۔ اس اجلاس میں علماء و حفاظ کرام اور عمائدین شہراور صحافیوں و وکلاء حضرات کی ایک بڑی تعداد شریک تھی۔ نظامت کے فرائض مولانا سید آصف صاحب ندوی نے انجام دئیے۔ اس اجلاس کو کامیاب کرنے میں حافظ عبدالرشید (اجنٹا اسٹون)،رحیم احمد خان، مولانا وسیم، حافظ عبدالحفیظ، حافظ وسیم، حافظ عبدالواجد(لکی فرنیچر)، حافظ جاوید، اویس احمد قریشی، حافظ جنید، حافظ عبدالمقیت، سید کلیم الدین، محمد بلال الدین اور جمعیت علماء قدیم شہر کے تمام ہی اراکین نے نہایت اہم رول ادا کیا۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *

0

Your Cart