خون انساں کی جہاں میں کوئی قیمت ہی نہیں

 : محمد طارق قاسمی لکھیم پوری

حق سے  ٹکرانے کی باطل میں تو جرءت  ہی نہیں
قومِ مسلم میں مگر پہلی سی غیرت ہی نہیں


 جس طرف دیکھئے پانی  کی  طرح  بہتا  ہے
خونِ انساں کی جہاں میں کوئی قیمت ہی نہیں


کیوں نہ  ہر  در پہ  ہوں میخوار ترے  سر بسجود
جب ترے شیشے میں ساقی! مئے وحدت ہی نہیں


تیرا   دیدار    کرے   ،  جو   دلِ   بینا    رکھے
چشم ظاہر میں،تری دید کی طاقت ہی نہیں


کارواں  لٹ  گیا  لیکن  تجھے  احساس  نہیں
کیا ہوا تھجکو ترے خوں میں حرارت ہی نہیں


شرطِ اول  ہے  پرستش  کے لئے  دل  کا خلوص
جس میں اخلاص ہو عنقا وہ عبادت ہی نہیں


میں   بھی   رودادِ   الم   اپنی    سناتا    طارقؔ
لب کشائی کی مگر مجھ کو اجازت ہی نہیں

 Website with 5 GB Storage

اپنا تبصرہ بھیجیں