شعلہ بن جائے گی سینوں میں جو چنگاری ہے

 محمدطارق قاسمی لکھیم پوری  

ہر طرف   مشقِ  ستم  اور  جفا کاری  ہےمہرو الفت کے عوض کیسی یہ غداری ہے
عہدِ الفت  کو ہر اک موڑ پہ تم نے توڑا اہل  توحید  کا  شیوہ   تو  فاداری  ہے
خوابِ غفلت میں مسلمانوں نے انگڑائی لیایسا لگتا  ہے  کہ  اب اٹھنے کی  تیاری  ہے
اہل ایماں کو تو ہر لمحہ شہادت مطلوبموت کا خوف  لئے  سینے میں زُنّاری ہے
اِن ہواؤں  سے کہو  ہم کو  نہ چھیڑیں ورنہشعلہ بن جائے گی سینوں میں جو چنگاری ہے
قافلہ والوں کے دل میں ہو اگر جوشِ جنوںپھر تو  دشمن  پہ  فقط بانگِ درا  بھاری ہے
حق بیانی کی یہ جرءت ہوئی کیسے طارقؔاِس میں تو  اہل سیاست کی دل آزاری ہے

 Website with 5 GB Storage

اپنا تبصرہ بھیجیں