قومِ مسلم! ترے حالات پہ رونا آیا

محمد طارق قاسمی لکھیم پوری 

کیا بتاؤں، مجھے کس بات پہ رونا آیا
قومِ مسلم ! ترے  حالات  پہ  رونا  آیا

ہم توسمجھے تھے کہ خوشیوں کاہےموسم، لیکن
غم  و  آلام  کی   برسات   پہ   رونا  آیا

سارا عالم ہے بنا جنگ کا میداں،اُس میں 
تیری  گمشدگیِ  آلات    پہ   رونا  آیا

میں تو ہنس ہنس کے سناتا رہا روداد حیات
مگر  ان  کو  مری  ہر  بات  پہ  رونا  آیا

کیاں بیاں تم سے کروں اپنے وطن کی حالت
حکمرانوں   کی   خرافات  پہ   رونا   آیا

  واسطے میرے  جو  پیغامِ اجل  آ پہونچا
 پھر تو  گزرے  ہوئے  دن رات  پہ رونا  آیا

 

 Website with 5 GB Storage

اپنا تبصرہ بھیجیں