قوم کے نام ایک خاموش پیغام

Views: 139
Avantgardia

پڑھیں اور اپنا محاسبہ کریں  

آج کل مختلف گروپس میں جاری حالات حاضرہ اور ہند میں مسلمانوں کے اوپر مظالم کو لیکر گیان کا سلسلہ تھم ہی نہی رہا ہے،  ہر قومی اور بین الاقوامی سیاست پر دھڑا دھڑ تبصرہ کیاجارہا ہے…سخت اضطراب اور غصہ آتا ہے یہ سوچ کر کہ گھنٹوں بیٹھکر سیکڑوں غیر تعمیری جزباتی حروف ٹائپ کرنے کا وقت کہاں سے اور کیوں کر ملتا ہے

کسی قوم کو مشق ستم، بزدل دشمن اس وقت بناتا ہے جب اسے مکمل یقین ہوتا ہے کہ مظلوم مؤثر ردعمل نہی کر سکتا.رد عمل یا عمل کی صلاحیت کا فقدان پچھلے پانچ سالوں کی وجہ سے نہی ہے بلکہ کاہلی اور غفلت میں گزارے گئے ہر دن ہے چاہے وہ 2014 سے پہلے کے ہوں یا اس کے بعد یا مستقبل میں ہونگے مغلوں کے زوال کے بعد سے ابتک مسلمان اس ملک میں مسلسل سیف زون( آسان راہ) کی تلاش میں رہے ہیں،چاہے وہ بڑے  مظہر کے طور پر پاکستان کی ڈیمانڈ ہو یا آزادی کے بعد  انفرادی طور پر جمہوری کمپیٹیشن میں حصہ نہ لیکر دور ایک کوٹیا بناکر بزدلی کی زندگی پر اکتفا کرنا ہو. 

حالانکہ اس ملک میں سب کو اختیار ہیکہ وہ اس ملک کی قسمت اپنے ہاتھوں سے لکھے، نیتا جو ایک غیر مستقل باڈی کاحصہ ہے اس کے چناؤ میں سروں کی ضرورت پڑتی ہے، ورنہ جو سالوں سسٹم میں رہ کر ملک کو چلاتا ہے وہ ایک اوپن اور تقریبا غیر متعصب مقابلہ جاتی امتحان کریک کر کے آتا ہے، جہاں مائینارٹی اور میجارٹی کا کوئ رول نہی ہے، لہذا اپنی کاہلی اور سستی پہ پردہ ڈالنے کیلئے لفظ اقلیت کا رونا، رونا درست نہی ہے… 

جمہوری سسٹم جتنا بھی کمزور ہوجائے میرٹ کی اہمیت کہیں نہ کہیں باقی رہتی ہے اور میرٹ کیلئے صرف تعلیم اور اچھی تربیت کی ضرورت ہوتی ہے. 

ہمارے سوا دوسری تمام قومیں اپنے وقت اور بجٹ کا بڑا حصہ اسی پہ برسوں سے خرچ کر رہی ہیں، اور یہ جو ان کے غنڈے سڑکوں پہ آکر قانون ہاتھ میں لیتے ہیں وہ بہت تھوڑے ہیں،جن کی حوصلہ افزائی کے لیے بہت سے کامیاب لوگ سسٹم میں موجود ہیں . 

پوری قوم کی فکر کرنے کیلئے ہر کوئ مکلف نہی ہے اور نہ ہی عملا ممکن ہے، ہاں عملی طورب پر اتنا ہر کوئی ضرور کرسکتا ہے کہ اپنے گھر، خاندان اور محلہ میں کسی کو جاھل نہ رہنے دے، لیبر بنکر گلف نہ جانے دے، کلرک بنے مگر آفیسیل کام ہو، ہوم گارڈ ہی سہی مگر سسٹم کا حصہ ہو، اپنے لوکیلٹی کے دشمن دوست سب کے بچوں پہ گہری نظر ہوں، آیا ان کی تعلیم و تربیت مقصد کے مطابق ہو رہی یا نہی….اکیلے نہی کرسکتے تو جماعت بناکر کیجئے مگر کیجئے… ایک دو سال میں نہی تو دس بیس سالوں میں کیجئے،اسلئے کہ برسوں کے  کفارہ کیلئے یہ بہت کم اور بہت آسان ہے،قوم کا تصور صرف تصور ہے محسوس اور موجود صرف افراد ہیں، آپکے لوکیلٹی میں کنارہ پہ واقع جھونپڑی میں ساکن تعلیم سے محروم ایک غریب فرد پوری قوم کو آج نہی تو کل مفلوج کردیگا، اسلئے “قوم قوم” کا مرثیہ پڑھنے کیبجائے اپنے گردوپیش کا جائزہ بھی لیجئے. 

یہی کیجئے..یہ خاموش انقلاب ہے جس کی ہی ضرورت ہے،سوچئے؟ کیا آپ اپنے لوکیلٹی کے سارے بچوں کو نام سے جانتے ہیں،ان کی حالت کیا ہے،ان کی نشوونما اور تعلیم وتربیت کیسی اور کہاں ہورہی ہے؟آپ کے زیر اہتمام کتنے اسکولس رن کر رہے ہیں ان کیلئے جن کی فکر نازک ہوتی ہے اور مثبت اور منفی کسی طرح سے اثر پزیر ہو سکتی ہے؟ سوچئے بنیادی تعلیم اگر غیر کے ہاتھوں ہو رہی ہوں آپکا بچہ آپکا ہوکر کے آپکا نہی ہے!!!اگر ہم ایسے نہی ہیں تو صرف لفاظ اور ایک ناکارہ ڈاکٹر ہیں. 

یہئ کیجئے اگر اس کے کرنے میں جہیز،فضول خرچی، مہنگے کپڑے، فالتو گاڑی میں پٹرول جلانا، غیر مفید دوستی یاری،مہنگے موبائل،بےجا تکلفات، زیادہ ٹمپریچر سے بچنے کیلئے ای سی کا انتظام، وقت کا ضیاع وغیرہ وغیرہ آرہے ہوں تو تورے توانائی اور یقین کیساتھ لات مار دیجئے ان سبکو!!! 

تم اپنے تغافل کا گلہ کیوں نہیں کرتے 

کیوں دیتے ہو الزام میرے دیدئے تر کو 

جواد علیمی علیگ

Comments: 1

Your email address will not be published. Required fields are marked with *

  1. صاحب قلم سیاست میں گریجویٹ ہیں حالات حاضرہ پر گہری نظر ہے
    موصوف نے قوم کے عین بیمار نبض پر ہاتھ رکھ کے باتیں لکھیں ہیں ۔
    یعنی حصول تعلیم ہی اس کا واحد حل ہے
    اس کا طریقہ بھی نہایت سہل انداز میں بتایا کہ ہر کوئی انفرادی طور ارد گرد کے لوگوں کی ذمہ داری نبھائں

0

Your Cart