میکشوں کا ترے کیا حال ہوا اے ساقی

Views: 16
Avantgardia

:محمد طارق قاسمی لکھیم پوری

جام ایسا بھی کوئی مجھ  کو  پلا  اے ساقی

جس کو پی کر  ملے  جینے  کا مزہ  اے ساقی

جامِ توحید کو پی کر بھی کوئی مست نہیں

میکشوں  کا   ترے  کیا  حال  ہوا  اے ساقی

کس  لئے  موسمِ  گل   ہم  سے   ہوا  ہے  برہم

روٹھی روٹھی سی ہے کیوں بادِ صبا اے ساقی

تیرے  شاہین  کا  زاغوں  نے  اڑایا  ہے  مذاق

شوقِ پرواز  ہو اب  اس کو  عطا  اے ساقی

خونِ مظلوم سے ظالم کی جہاں پیاس بجھے

ہند  میں  کیسا  یہ  میخانہ  کھلا   اے  ساقی

تیرے  رندوں  کی  نظر میں  ہے  وہی عینِ بقا

اہلِ  دنیا   جسے   کہتے   ہیں    فنا    اے  ساقی

تیرا عاشق ہی نہیں وہ جسے محبوب نہ ہو

تیرے  محبوب  کی  ہر  ایک  ادا  اے  ساقی

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *

0

Your Cart