مجھے مانگتے ہوئے شرم آتی ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ٹھک۔۔۔ٹھک۔۔۔ٹھک۔۔۔۔۔۔ٹھک۔۔۔ٹھک۔۔۔ٹھکسمیر۔۔۔۔سمیر۔۔۔۔۔ارے دیکھ یہ ہاجرہ کے گھر سے کس چیز کی آواز آرہی ہے اور مسلسل آرہی ہے۔۔۔۔ایک تو بڑی مشکل سے دوپہر میں تھوڑا بہت سونا ملتا ہے اور اسی میں اس کے بچے کچر پچر۔۔۔۔اور کھٹ پھٹ کی آوازیں کرنے لگتے ہیں۔۔۔۔خدایا میں تو ایسی پڑوسن سے تنگ ہی آگئی ہوں۔۔۔۔اللہ ہی اس سے نمٹے گا۔۔۔۔امی جی ٹھہریں ذرا۔۔۔یہ کیا آپ اناپ شناپ ہاجرہ چاچی کے بارے میں بولی چلی جا رہی ہیں۔۔۔۔رقیہ کے بڑی بیٹی اپنی امی رقیہ کی بات کاٹتے ہوئ بولی۔۔۔ذرا تحقیق تو کرلیں پہلے کیا معاملہ ہے۔۔۔۔واللہُ اعلم ان پر کیا آفت آپڑی ہے جو یہ کھٹ کھٹ کی آوازیں آرہی ہیں۔۔۔۔رقیہ اپنی بیٹی کی یہ باتیں سن کر منہ بسورتے ہوئے بولی ہاں تجھے تو بڑی فکر لگی رہتی ہے ہاجرہ کی جیسے وہ تیری کوئ سگی لگ رہی ہو ؛لیکن اسے پھر بھی ہمارے آرام کی کوئ پرواہ نہیں۔۔۔۔ہوں۔۔۔۔😏سمیر تھوڑی دیر کے بعد ہاجرہ کے گھر سے آیا اور اپنی بہن انابیہ سے کہا کہ باجی آپ خود دیکھ کر آئیں مجھے تو کچھ سمجھ نہیں آیا۔۔۔۔ہاں بس وہ طُفیل۔۔۔وہ چھوٹا والا بیٹا ہے نا چاچی کا۔۔۔۔۔وہ ایک پتھر لے کر دیوار پر ہاتھ اور اس پر اپنی پیشانی رکھے مسلسل روئے چلے جا رہا ہے۔۔۔اور وقفے وقفے سے پتھر دیوار پر مار رہا ہے جس سے یہ آوازیں آ رہی ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تھوڑی دیر کے بعد انابیہ اپنی پُر اشک آنکھوں سے بوجھل قدموں کے ساتھ چوکھٹ سے اندر آتی ہوئ دکھائی دی۔۔۔مانو اسے کوئ بہت بڑا دھچکا لگا ہے۔۔۔۔۔امی نے معلوم کیا بیٹا انابیہ کیا ہوا تمہیں۔۔۔چند ساعت پہلے تو بڑے تیز قدموں سے اپنی چاچی کے یہاں گئی تھی۔۔۔۔۔اور اب یہ رفتار میں سستی۔۔۔۔۔کسی نے کچھ کہہ دیا کیا۔۔۔۔؟۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اممممممممییییی۔۔۔۔۔۔اممممیی۔۔۔۔۔۔۔یہ ادھورا لفظ کہتے ہی انابیہ کی آنکھوں سے ٹم ٹم کرکے آنسو کے دو قطرے تیزی کے ساتھ زمین پر گرے۔۔۔۔اور وہ خاموشی سے زمین پر اکڑوں بیٹھ گئی۔۔۔۔اس کی تو اب سسکی بندھ چکی تھی۔۔۔۔انابیہ۔۔۔انابیہ۔۔۔!! بٹیا کیا دیکھ لیا۔۔۔۔انابیہ امی سے چمٹ کر رونے لگی۔۔۔۔اس کے گرم گرم آنسو رقیہ کے کاندھے کو حرارت پہنچا رہے تھے تبھی اس نے سمیر کو آواز لگائی۔۔۔۔۔سمیر۔۔۔!!! انابیہ بیٹی کے لیے ایک گلاس پانی کا لے کر آو۔۔۔پانی پینے کے بعد۔۔۔۔۔۔۔۔ اب بتاؤ بیٹی۔۔۔۔امی مینے چاچی کا گھر آج بالکل خستہ حالت میں دیکھا۔۔۔۔کتنے دنوں کے بعد تو آج میرا جانا ہوا تھا۔۔۔۔امی۔۔۔چاچی بالکل کمزور ہوگئی ہیں۔۔۔۔جب کہ ابھی تو ان کی شادی کو کُل آٹھ سال ہی ہوئے ہیں۔۔۔۔۔۔اور ان صرف دو بچے ہی ہیں۔۔۔۔لیکن بے چاری بیوہ ہیں کیا کریں وہ بھی۔۔۔۔۔ان کا چھوٹا بیٹا امان وہ اسی لیے کھٹ کھٹ کر رہا تھا کہ عید کے لیے چاچی کے پاس نئے کپڑے دلانے کو پیسے نہیں ہیں اور وہ اسے سمجھانے کی کوشش کر رہی تھیں کہ بیٹا اگلے سال نئے کپڑے دلا دوں گی۔۔۔ابھی اپنے بڑے بھائ کے پہن لینا۔۔۔۔بس وہ ضد کر بیٹھا۔۔۔پڑوس میں کسی بچے کے نئے کپڑے دیکھ آگیا تھا وہ۔۔۔۔۔۔۔امی بس کیا بتاؤں میں۔۔۔۔میری حالت یہ سب منظر دیکھ کر دگر گوں ہوگئ کہ اللہ نے ہمیں سب کچھ دے رکھا ہے اور ہم نے اپنے پڑوس کی خبر تک نہیں لی۔۔۔۔ویسے بھی اب تو عید آنے والی ہے۔۔۔۔۔اور وہ بے چاری خود دار ہیں۔۔۔۔مینے ان سے کہا: چاچی ہمارے گھر آکر بتادیتیں یہ کنڈیشن، تو کہنے لگی بیٹی مجھے مانگتے ہوئے شرم آتی ہے۔۔۔۔بس اللہ پر توکل ہے۔۔۔۔وہی سب آسانیاں لے کر آئے گا۔۔۔۔۔۔۔۔امی چاچی کا یہ جواب سن میرے ذہن میں قرآن پاک کی یہ آیت گردش کرنے لگی۔۔۔۔یحسبھم الجاھل اغنیاء من التعفف، تعرفھم بسیمھم، لایسئلون الناس الحافا(البقرہ:273)۔۔۔ چوں کہ وہ اتنے پاک دامن ہیں کہ کسی سے سوال نہیں کرتے؛ اس لیے ناواقف آدمی انہیں مال دار سمجھتا ہے۔۔۔تم ان کے چہرے کی علامتوں سے ان (کی اندرونی حالت) کو پہچان سکتے ہو (؛مگر) وہ لوگوں سے لپٹ کر سوال نہیں کرتے۔۔۔تحریر: احمد_شُجاعؔواٹسپ نمبر: 9897860846

 Website with 5 GB Storage

اپنا تبصرہ بھیجیں