مضامین

اجلاس مجلس منتظمہ جمعیۃ علماء کھٹنئی 03

ماسٹر محمد شمس الضحیٰ کھٹنوی سابق صدر جمعیت علمائے سنتھال پرگنہ

16/ مئی1965ء کو بروز اتوار بمقام کھٹنئی جمعیۃ علماء کھٹنئی کی مجلس منتظمہ کا اجلاس ہوا، جس میں اراکین کے علاوہ علاقہ کے نمائندہ و صائب الرائے حضرات نے شرکت کی۔ اس میں علاقے کے حالات کے تناظر میں کئی اہم فیصلے لیے گئے اور گاوں کی تعمیر و ترقی کے لیے سات افراد پر مشتمل ایک کمیٹی تشکیل دی گئی، جس کا نام (V.D.C) کا رکھا گیا جس کا فل فارم (Village Development Committee) تھا۔اور آگے منتظمہ کا اجلاس کرنے کے لیے تیاری کا اعلان کردیا گیا۔ چنانچہ ممبرسازی کے لیے سب ڈویژن گڈا، دیوگھر اور دمکا کے تقریبا 37/ مقامات پر بیداری مہم چلائی گئی۔ لوگوں میں بھی بہت بیداری پیدا ہوئی اور بڑی تعداد میں جمعیۃ کے ممبر بنے۔
ایڈھاک کمیٹی کاانتخابی اجلاس
11/ جون 1965ء کو بمقام کھٹنئی زیر صدارت الحاج مولانا محمد حمید الدین صاحبؒ انتخابی اجلاس منعقد ہوا۔ تلاوت قرآن کریم اور نعت و نظم کے بعد مولانا محمد شمس الحق صدیقی لوچنی کنوینر نے ضلع جمعیۃ کی رپورٹ اور جمعیۃ کی تاریخ پیش کی۔ مولانا محمد بدر الدین قاسمی نواڈیہہ، ڈاکٹر محمد نور نبی کھٹنوی پروفیسر علی گڑھ مسلم یونی ور سٹی، ماسٹر محمد معز الدین کھٹنوی اور ماسٹر محمد شمس الضحیٰ صاحبان نے تنظیم، دینی تعلیم، موجودہ مسائل اور ان کا حل اور حالات حاضرہ میں مسلمانوں کی ذمہ داری جیسے عنوانات پر خطاب کیے۔ اس میٹنگ کی اسی نشست میں عہدیداران اور اراکین مجلس منتظمہ کا انتخاب عمل میں آیا، جس کی تفصیل پیش ہے:
۱۔ جناب ماسٹرمحمد شمس الضحیٰ صاحب کھٹنئی صدر۔
۲۔ مولانا محمد شمس الحق صدیقی صاحب لوچنی ناظم اعلیٰ
۳۔ ماسٹر محمد شفیع الہدیٰ صاحب جامتاڑا نائب صدر
۴۔ حاجی مولوی عبدالمجید صاحب رجون ناظم
۵۔ حافظ محمد داود صاحب پاکوڑ ناظم
۶۔ حاجی محمد ظہور الحق صاحب کھٹنئی خازن
اراکین مجلس منتظمہ
۱۔ مولانا محمد زبیر جامعی پاکوڑ۔
۲۔ ماسٹر محمد شمس الحق چھوٹی قدر جناں
۳۔ سید شاہ افضال حسین راج محل
۴۔ حکیم حاجی محمد نعیم اللہ امام بڑی مسجد صاحب گنج
۵۔ مولانا قاری قطب الدین جہاز قطعہ
۶۔ مولانا عبدالعزیز اسنبنی گڈا
۷۔ مولانا مقبول احمد کدمہ
۸۔ مولانا حبیب عالم دگھی
۹۔ حافظ محمد منیر الدین مال پکڑیا
10۔ مولانا محمد نصیر الدین لوبندھا
11۔ محمد واعظ الدین املو
12۔ مولانا عبدالمجید گورگاواں
13۔ مولانا حکیم سید شاہ حفیظ الدین ندوی گورگاواں
14۔ مولانا محمد توحید عالم دوگاچھی
15۔ ماسٹر محمد ارشاد علی مصرا ڈیہہ
16۔ مولانا عطاء الرحمان گھگھرجوری
17۔ حافظ عبدالشکور روپنی دیوگھر
18۔ مولانا محمد داود پلواہی
19۔ ڈاکٹر مولانا عظیم الدین نواڈیہہ ککنی
20۔ مولانا محمد عثمان بارہ پنسار سارٹھ
21۔ مولانا محمد رفیق احمد مدرسہ اسلامیہ مدھو پور
انتخابی عمل کے بعد کچھ ضروری تجاویز منظور کی گئیں۔ بعد ازاں تقریبا دو بجے شب میں حاجی ظہور الحق صاحب کی دعا پر اس نشست کا اختتام ہوا۔
اگلے دن یعنی12/ جون1965ء کو بعد نماز فجر دوسری نشست کا آغاز ہوا، جس میں اراکین عاملہ کو چنا گیا، جن کے نام درج ذیل ہیں:
۱۔ ماسٹرمحمد شمس الضحیٰ کھنٹنئی (صدر)
۲۔ مولانا محمد شمس الحق صدیقی لوچنی (ناظم اعلیٰ)
۳۔ ماسٹر محمد شفیع الہدیٰ (نائب صدر)
۴۔ مولانا محمد علاء الدین دگھی
۵۔ مولانا محمد بدر الدین قاسمی نواڈیہہ سرسرا
۶۔ مولانا محمد شمس الحق جہاز قطعہ
۷۔ ماسٹر محمد اصغر علی جمنی کولہ
۸۔ مولانا عبدالرزاق قاسمی مدھوبن
۹۔ مولانا محمد عمر پاکوڑ
10۔ حاجی محمد عین الحق برہروا
۱۱۔ مولانا محمد سراج الدین بنیارا
چوں کہ اس سے قبل جمعیۃ علماء سنتھال پرگنہ کے صدر مولانا محی الدین صاحب کا انتقال ہوگیا تھا، اس لیے ان کے ساتھ تمام مرحومین کے لیے دعائے مغفرت اور ایصال ثواب کرتے ہوئے درج ذیل تجویز منظور کی گئی:
تجویز: (الف) مولانا موصوف کی یادگار کے لیے کھٹنئی گاوں کی جو سڑک اتر دکھن جانب ہے، جس کے کنارے ڈاک خانہ، اسکول، مدرسہ وغیرہ ہے، اس کا نام محی الدین روڈ رکھا جائے اور خط و وکتابت میں استعمال کیا جائے۔
(ب)’تاریخ محی الدین‘ کے نام سے ایک کتاب مرتب کی جائے۔
(ج) مدرسہ اسلامیہ کھٹنئی میں فوری طور سے چند کمرے تیار کراکر ”اسعد منزل“، ”محی الدین منزل“ اور ”اسلامیہ ہال“ نام رکھا جائے۔ ”محی الدین منزل“ گاوں کے ہمدردوں کے ذریعہ تیار کیا جائے۔
مجلس عاملہ کی نشست
14/ اگست 1965ء کو جاری کیے گئے ایجنڈے کے مطابق 2/ ستمبر1965ء بروز جمعرات بعد نماز عصر دفتر جمعیۃعلماء، گڈا میں مجلس عاملہ کی ایک نشست رکھی گئی۔ جس میں 1965-66ء کا میزانیہ پیش ہو کر منظور ہوا۔ اور درج ذیل تجاویز پیش کی گئیں:
(۱) سرگرم اور مستعد کارکنوں کا پتہ لگاکر ہر تھانہ سے کم از کم ایک نمائندہ مجلس منتظمہ میں شامل کیا جائے۔ اور اس کی تصدیق آئندہ مجلس میں کرالی جائے۔
(۲) سب ڈویژن دیوگھر کے چند مقامات: روپنی، پلواہی، تھانہ موہن پور، نوا ڈیہہ سرسرا، تھانہ سارواں سے دعوت نامہ اور بنیارا تھانہ کی گذارش کی بنیاد پر یہ طے ہوا کہ آئندہ روپنی تھانہ موہن پور میں ایک اجلاس عام کیا جائے۔
(۳) ضلع میں تنظیم جمعیۃ کو عام کرنے کی غرض سے دو ڈھائی ہفتوں کا پروگرام مرتب کیا گیا۔ اور یہ طے کیا گیا کہ دورہ وفد میں حسب ذیل حضرات میں سے چند ذمہ دار بھی شامل رہا کریں گے:
(۱) مولانا سید شاہ حفیظ الدین صاحب ندوی گورگاواں۔
(۲)ماسٹرمحمد شمس الضحٰی صاحب کھٹنئی صدر۔
(۳) مولانا محمدشمس الحق صدیقی صاحب لوچنی ناظم اعلیٰ۔
(۴) مولانا محمد بدر الدین قاسمی نوا ڈیہہ سرسرا۔
(۵) مولانا محمد حدیث کھٹنئی
(۶) مولانا عبد الرزاق قاسمی مدھوبن دیوگھر۔
(۴) دفتری نظام کو درست رکھنے کے لیے لیٹرپیڈ (جمعیۃ علماء ضلع سنتھال پرگنہ، صدر ضلع جمعیۃ، مقامی جمعیۃ) اور چند ضروری مہریں تیار کرالی جائیں۔ رقم وصولی کے لیے ضلع جمعیۃ کے نام سے رسید بھی ایک ہزار کی تعداد میں چھپوائی جائے۔ دفتر کے لیے ایک سائن بورڈ بھی مناسب ہے۔ ان چیزوں کا خاکہ صدر و ناظم اعلیٰ صاحبان آپسی مشورے سے طے کرلیں گے۔
(۵) جمعیۃ علماء ضلع سنتھال پرگنہ کی طرف سے ایک عمدہ کتاب”تعارف جمعیۃ عام“ 1385 ھ مرتب کرکے شائع کی جائے تاکہ جمعیۃ علماء کی مختصر مگر جامع تاریخ عوام کی خدمت میں پیش کی جاسکے۔ مضامین کے واسطے تمام مشاہیر قلم اور ذمہ داران جمعیۃ سے گذارش کی جائے۔ ان کے علاوہ بھی دیگر تجاویز منظور کی گئیں۔
پروگرام دورہ ضلع سنتھال پرگنہ
مجلس عاملہ کے فیصلے کے مطابق سنتھال پرگنہ کے مختلف مقامات کا دورہ کیا گیا، جس کی تفصیلات پیش ہیں:
16/ ستمبر1965ء کھٹنئی۔17/ ستمبر 1965 جمعہ بنیارا (دمکا) شام سریا ہاٹ دمکا۔18 / ستمبر 1965ء بروز جمعرات روپنی دیوگھر۔ 19/ ستمبر 1965ء بروز اتوار دیوگھر20/ ستمبر 1965ء سوموار اسنبی گڈا۔ 21/ ستمبر1965ء منگل مدھوبن دیوگھر22/ ستمبر 1965ء جمعرات گورگاواں گڈا۔24/ جمعہ دگھی گڈا۔ 26/ ستمبر 1965ء اتوار رگھوناتھ پور دیوگھر۔ 28/ ستمبر1965ء منگل مورنئے دیوگھر29/ ستمبر1965ء بدھ گڈا بازار۔30/ ستمبر 1965 ء و یکم اکتوبر1965ء جمعرات و جمعہ پاکوڑ سب ڈویژن۔2/ اکتوبر1965ء سنیچر برہروا راج محل۔ 3/ اکتوبر 1965ء اتوار صاحب گنج۔ 7 و 8/ اکتوبر 1965ء جمعرات و جمعہ جامتاڑا سب ڈویژن 10تا 12/ اکتوبر1965ء سنیچر تا سوموار شرکت تبلیغی اجتماع بھاگلپور۔
روداد میٹنگ منعقدہ 12/ ستمبر1965ء
12/ ستمبر 1965ء جمعرات کو مجلس عاملہ جمعیۃ علماء سنتھال پرگنہ کی میٹنگ ہوئی، جس میں درج ذیل تجاویز منظور کی گئیں:
(۱) پاکستان نے ہمارے وطن عزیز پر جو حالیہ جارحانہ حملہ کیا ہے، یہ اجلاس اس کی شدید مذمت کرتا ہے اور بری نگاہ سے دیکھتا ہے۔
(۲) یہ اجلاس اپنے ملک کے جوانوں کی حوصلہ افزائی کرتا ہے اور ان کی خدمت میں خراج تحسین پیش کرتا ہے۔
(۳) یہ اجلاس اپنی جمہوری حکومت کو ہر ممکن تعاون کرنے پر آمادہ و تیار ہے اور ہر طرح کی جانی و مالی قربانی پیش کرتا ہے۔
(۴) ان تجاویز کی نقلیں حسب ہدایت سرکلر نمبر1۰ مورخہ 6 / ستمبر1965ء جمعیۃ علماء ریاست بہار، اخبارات اور ذمہ دار حضرات کو بھیج دی جائیں۔
(۵) مولانا محمد بدر الدین قاسمی (رکن مجلس عاملہ) اپنے لڑکے کے انتقال کی وجہ سے شریک نہ ہوسکے، ان کے لیے دعائے مغفرت کرتے ہوئے تعزیت پیش کرتا ہے۔
تار کے لیے یہ جملے رہیں گے:
Always ready to searve, Support govt, Nation.
Jamiat Ulama, Muslims, Santhal Pargana
تار و تجاویز بھیجنے کے لیے درج ذیل حضرات نے مدد فرمائی:
مولانا سید حفیظ الدین ندوی، ماسٹرمحمد شمس الضحیٰ، مولانا عبدالرزاق قاسمی، مولانا محمد شمس الحق لوچنی، حافظ منیر الدین فی کس ایک روپیہ۔ مولانا عباس احمد قاسمی، محمد حفیظ الدین، پچاس پچاس پیسہ، محمد مسعود احمد بیس پیسے۔ آٹھ افراد کل چھ روپیے بیس پیسے۔

Tags

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

یہ بھی پڑھیں
Close
Back to top button
Close
%d bloggers like this: