غزل

اسے ہر جگــــہ ہر نگر ڈھــــونڈتے ہیں.

*اَزقَــــــــــلم:-* _افتخـــــــار حسین "احســـــــــــن”._
*رابطـــــــــــــہ نمبــــــــــــــــر:-* _.6202288565._
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسے ہر جگــــہ ہر نگر ڈھــــونڈتے ہیں.
شب وروز ہم ان کا گھر ڈھونڈتے ہیں.

جو دشمـن کو اپنــــے گلے سے لگا لـے.
زمانے میں ایسا بشر ڈھـــــونڈتے ہیں.

کہ کفــــار بھی پڑھ لے کلمــہ نبی کـا.
دعاؤں میں ایسا اثر ڈھـــــونڈتے ہیں.

ملےجس سےمفلس غریبوں کو کھــانا.
مصیبت میں ہم ایسےگھرڈھونڈتےہیں.

جہاں پیـــــار کی روز ہوتـی ہو بارش.
جوانی سے ہم وہ شہر ڈھــونڈتے ہیں.

مِرےقلب مضطرکوجس سےہو راحت.
چلو چل کےکوئی شجر ڈھونڈتے ہیـں.

جسے مصطفٰـی نےعقیدت میں چوما.
سداخواب میں وہ حجر ڈھونڈتےہیں.

اسے لوگ نادان کہتــــے ہیں *”احسـن”*.
جو بنجر زمیں میں ثمر ڈھونڈتے ہیں.
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

یہ بھی پڑھیں
Close
Back to top button
Close
%d bloggers like this: