اہم خبریں

انگریزوں کے بعدبھاجپا کے دورحکومت میں عوام پر ظلم کی انتہا

ہندو مسلم ایکتا ہوئی مضبوط، سڑکوں پر بھاجپا سرکار کے خلاف لڑائی:محمد آفاق

لکھنؤ24دسمبر(پریس ریلیز)این آر سی اور کیب کے سلسلے میں بھارت کی عوام پورے ملک میں سڑکوں پر احتجاج کرتے ہوئے اتر آئی ہے۔ اس احتجاجی دھرنا اور مخالفت میں پولیس کے ذریعہ تشدد اور ہندوستانی عوام کے موت کا ذمہ دار ہمارا وزیر داخلہ امت شاہ ہے۔ جس نے پارلیمنٹ کے اندر ایسا بل پیش کیا جس بل کی مخالفت میں ہندو مسلم کو ایک ساتھ سڑکوں پر آنا پڑا۔ سماجی کارکن تنظیم کے کنوینر محمد آفاق نے کہاکہ ہمارے ملک میں ایسی طاقتیں پنپ رہی ہیں جو ہمیشہ ہندو مسلم میں نفرت پھیلا کر فساد کرنے کی کوشش کرہی ہیں۔ جس کا نتیجہ ہندوسانی مسلمان کو جھیلنا پڑا۔بابری مسجد کو شہیدکیا گیا، کشمیر کو کشمیری پنڈتوں کے نام پر برباد کر دیا، 2002میں گجرات میں ہزاروں مسلمانوں کو موت کے گھاٹ اتار دیا گیا، ہجومی تشدد میں مسلم سماج کے لوگوں کو مارا گیا، زبردستی بھارت کو ماتا کہلانے کی کوشش کی گئی۔ جبکہ ہندوستان ایک ملک ہے، گائے کے نام پر مارا گیااور مسلم سماج کے افسران کو چھینا گیا۔ امن کا فرشتہ ڈاکٹر ذاکر نائیک کو دہشت گرد ثابت کیا گیا کیونکہ ڈاکٹر نائیک کے ذریعہ مذہب کے نام پر دھندہ کرنے والوں دکانیں بند ہورہی تھیں۔ اتناظلم ہونے کے بعد بھی مسلم سماج خاموش رہا، یہاں تک بابری مسجد چھن گئی، پھر بھی مسلمان خاموش رہا، لیکن جب آئین کے خلاف پارلیمنٹ میں بل پیش کیا گیا تو مسلم سماج ہندوستانی آئین کی حفاظت کیلئے سڑکوں پر اترنے کو مجبور ہو گیا۔ اس کے بعد ہندو بھی مسلمانوں کے ساتھ سڑکوپر احتجاجی دھرنا کے لئے آگئے۔ جسے دیکھ کر نفرت پھیلانے والی طاقتیں ہندو مسلم کی ایکتا کو دیکھ کر دنگ رہ گئیں۔ ان کی سیکڑوں سال کی محنتوں پر پانی پھر گیااور جھارکھنڈ کا الیکشن نتیجہ سامنے ہے۔ محمد آفاق نے کہاکہ ملک میں بھاجپا سرکار مذہب کی سیاست کرنے والی پارٹی ہے۔اس نے ملک کی ترقی اور عوام مفاد کے لئے کوئی کام نہیں کیا۔ رام مندر کے لئے راستہ ہموار کر لیا۔ہندومسلم ایکتا کو دیکھ کر ہندوستان کے ہر شہری کو وقار حاصل ہے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
%d bloggers like this: