غزل

ایک زمین تین شاعر "کیونکر ہوا”

 *بہادر شاہ ظفر👇*
کیا کہوں دل مائلِ زلفِ دوتا کیونکر ہوا
یہ  بھلا  چنگا  گرفتار  بلا  کیونکر  ہوا
جنکو محرابِ  عبادت  ہو  خمِ  ابروئے  یار
ان کا کعبے میں کہو سجدہ ادا کیونکر ہوا
دیدہء  حیراں  ہمارا  تھا  تمہارے  زیر  پا
ہم کو حیرت ہے کہ پیدا نقش پا کیونکر ہوا
نامہ بر  خط دے کے اس نو خط کو تو نے کیا کہا
کیا خطا تجھ سے  ہوئی اور وہ  خفا  کیونکر ہوا
جنکو  یکتائی  کا دعوی تھا  وہ  مثل آئنہ
ان کو حیرت ہے کہ پیدا دوسرا کیونکر ہوا
جو نہ ہونا تھا ہوا ہم پر تمہارے عشق میں
ہم نے اتنا بھی نہ پوچھا کیا ہوا کیونکر ہوا
وہ  تو ہے  نا آشنا  مشہور عالم  میں  ظفر
پر خدا جانے کہ تجھ سے آشنا کیونکر ہوا
 *علامہ اقبال 👇*
کیا کہوں اپنے چمن سے میں جدا کیونکر ہوا
اور  اسیرِ  حلقہء  دام   ہَوا   کیونکر  ہوا
جائے حیرت ہے  برا سارے زمانے کا ہوں میں
مجھ کو یہ خلعت شرافت کاعطا کیونکر ہوا
کچھ دکھانے  دیکھنے کا تھا  تقاضا طور پر
کیا خبر ہے تجھکو اے دل فیصلہ کیونکر ہوا
ہے طلب بے مدعا ہونے کی بھی اک مدعا
مرغ دل  دام  تمنا سے  رہا  کیونکر  ہوا
دیکھنے والے یہاں بھی دیکھ لیتے ہیں تجھے
پھر یہ وعدہ  حشر کا  صبر آزما کیونکر ہوا
موت کا نسخہ ابھی باقی ہے اے درد فراق
چارہ گر دیوانہ ہے  میں لا دوا کیونکر ہوا
تو نے دیکھا ہے کبھی اے دیدہء عبرت کہ گل
ہو کے پیدا  خاک سے رنگیں قبا  کیونکر ہوا
 *مفتی طارق لکھیم پوری👇*
راہِ حق  سے  راستہ  تیرا  جدا  کیونکر  ہوا
تجھ سے مخفی نقشِ پائے مصطفے کیونکر ہوا
چھن گئی غیرت تری شرم و حیا بھی لٹ گئی
اِس قدر  تہذیبِ مغرب  پر  فدا  کیونکر  ہوا
سوچنا اے مرد مومن! جب تجھے فرصت ملے
خالقِ کون و مکاں تجھ سے خفا کیونکر ہوا
ہر عمل تیرا  ہے  اوروں کو دکھانے کے لئے
ہوکے مومن اِس قدَر تو خود نما کیونکر ہوا
رکھ دیا سر خاک پر ،دل کو جھکایا ہی نہیں
تو ہی کہہ دے پھر ترا سجدہ ادا کیونکر ہوا
ہے تمہاری  ہی خطا جو  قافلہ لوٹا گیا
وہ جو رہزن تھا، تمہارا رہنما کیونکر ہوا
تابِ ضبطِ غم کہاں ،اب تو پھٹا جاتاہے دل
یاالہی ! درد  یہ حد سے سوا  کیونکر ہوا
Tags
مزید دکھائیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close