مضامین

جمعیۃ علماء جھارکھنڈ کے مرد مجاہد اور روح رواں مولانا ابوبکر قاسمی صاحب رحمۃ اللہ علیہ

اسرار الحق مظاہری صدر جمعیۃ علماء جھارکھنڈ۔

جمعیۃ علماء جھارکھنڈ کے مرد مجاہد اور روح رواں مولانا ابوبکر قاسمی صاحب رحمۃ اللہ علیہ بہار مدھوبنی کھیرواں کے رہنے والے تھے ، آپ نے ابتدائی درجات سے متوسطات تک مدرسہ حسینیہ کڈرو، رانچی میں تعلیم حاصل کی، اور فضیلت دارالعلوم دیوبند سے حاصل کی، فراغت کے بعد مدرسہ حسینیہ رانچی میں بحیثیت مدرس تقرری ہوئی، اور تا دم حیات خلوص و للہیت کے ساتھ مدرسہ کی خدمت کرتے رہے، جمعیۃ علماء ہند سے آپ کا تعلق آپ کی اوائل سرگرمیوں سے ہی رہا، اور حضرت مولانا ازہر صاحب نور اللہ مرقدہ کی سرپرستی میں کام کرتے رہے،۔
جب صوبہ جھارکھنڈ بنایا گیا تو جمعیۃ علماء جھارکھنڈ بھی ایک سرگرم تنظیم کے طور پر ابھر کر آئی. اور انتخابی اجلاس کا انعقاد کیا گیا، جس میں مولانا ازہر صاحب رحمۃ اللہ تعالیٰ علیہ کو صدر، مجھ خاکسار کو نائب صدر، اور مولانا ابوبکر قاسمی رحمۃاللہ علیہ کو سکریٹری کی حیثیت سے نامزد کیا گیا، اس وقت سے ہی جمعیۃ علماء جھارکھنڈ کی سرگرمی شروع ہوئی اور ہم سب مل کر کام کرتے رہے، اور مولانا ابوبکر صاحب رحمۃ اللہ علیہ کی خدمات جلیلہ اور کارہائے نمایاں ہم سبھوں کی زبان زد رہیں، آپ بشمول میرے، تمام رفقاء اور عاملہ کے ساتھ مشورہ اور اتفاق رائے سے خوب کام کرتے رہے، بالخصوص حال میں ممبر سازی کی سرگرمیوں آپ کی قابلِ دید ہمت وحوصلہ خوب دیکھنے کو ملیں،
ایک جا رہتے کہاں عاشقِ بدنام کہیں
دن کہیں،رات کہیں، صبح کہیں، شام کہیں
آپ رفقاء کے ساتھ مستقل سفر کرتے رہے، اور مجھے کارگزاری سناتے رہے، میں نے کئی بار کہا کہ کام کو تقسیم کردیا کریں تو شخص واحد پر بار کم ہوجائے گا، تو آپ جواباً فرماتے : آپ اپنے علاقہ پر نظر رکھیں، میں ادھر دیکھ لونگا۔
میں نے بار بار کہا کہ اپنی صحت کا خیال رکھیں، تو فرماتے : اللہ مالک ہے اور بہترین مددگار ہے۔
آپ چند روز بخار زدہ رہے، اور طبیعت بگڑتی چلی گئی، "مرض بڑھتا گیا جوں جوں دوا کی” آپ نے دار فانی کا سفر مکمل کیا، اور 13 اپریل کی رات داعی اجل کو لبیک کہا اور جوار رحمت میں منتقل ہوگئے،
موت سے کس کو رستگاری ہے
آج وہ کل ہماری باری ہے۔
اور 14 اپریل بمطابق یکم رمضان المبارک مدرسہ حسینہ کڈرو رانچی میں آپ کی نماز جنازہ ادا کی گئی اور کڈرو قبرستان میں سپرد خاد کئے گئے ۔
حضرت مولانا اپنے پسماندگان میں دو بیٹے ثاقب اور راغب، ایک بیٹی، اہلیہ، اور اپنے رفقاء و متوسلین کی ایک بڑی جماعت چھوڑ گئے، اللہ تعالیٰ حضرت والا کی مغفرت فرمائے، اور تمام پسماندگان کو صبر جمیل عطا فرمائے، آمین یا رب اللعالمین۔
میں جمعیۃ علماء جھارکھنڈ کے تمام ذمہ داران سے اپیل کرتا ہوں کہ صبر و تحمل سے کام لیتے ہوئے بالخصوص حضرت مولانا ابوبکر صاحب کے منصوبوں کو اور عامۃ جمعیۃ علماء کی سرگرمیوں کو آگے بڑھانا ہے، اور اتحاد و اتفاق کے کام کرنے کی ضرورت ہے، اللہ تعالیٰ آپ تمام کی خدمات کو قبول فرمائے، اور حضرت مولانا کی مغفرت فرما کر جنت میں مقام عطا فرمائے، آمین یا رب العالمین۔

اسرار الحق مظاہری
صدر جمعیۃ علماء جھارکھنڈ۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

یہ بھی پڑھیں
Close
Back to top button
Close
%d bloggers like this: