اسلامیات

روزہ رکھنے والوں کے پچھلے گناہ معاف کر دئیے جاتے ہیں

افادات : عارف باللہ حضرت مولانا محمد عرفان صاحب مظاہری دامت برکاتہم گڈا جھارکھنڈ

روزہ رکھنے سے جہاں روزہ دار کو ثواب ملتا ہے، اور صحت و تندرستی حاصل ہوتی ہے، وہیں روزہ کا ایک فائدہ یہ ہے کہ اس سے گناہ بھی معاف ہوتے ہیں، اللہ تعالیٰ نے قرآن مجید میں ایک اصول اور ضابطہ بتا دیا ہے، *ان الحسنات یذھبن السیآت (سورہ ھود)* کہ نیکیاں برائیوں کو ختم کر دیتی ہیں، چنانچہ اللہ کے جو بھی احکام ہیں اور نیکی کی قبیل سے جو بھی چیزیں ہیں، جب بندہ ان کو کرتا ہے تو اللہ تعالیٰ ان نیکیوں کی بدولت جہاں ثواب مرحمت فرماتے ہیں وہیں کچھ گناہ بھی معاف فرماتے ہیں، حتی کہ وضو اور نماز سے بھی بہت سارے گناہ معاف ہوتے ہیں، اب کس عمل سے کون سے اور کتنے گناہ معاف ہوتے ہیں اس کی تفصیل احادیث میں موجود ہے.

جہاں تک روزے کی بات ہے، روزہ رکھنے سے کتنے گناہ معاف ہوتے ہیں اور اس کی کیا شرائط ہیں، اس کے بارے میں بھی حدیث میں صراحت موجود ہے، حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ سرکار دو عالم صلی اللہ علیہ و سلم نے فرمایا *من صام رمضان ایمانا و احتسابا غفر لہ ماتقدم من ذنبہ (بخاری و مسلم)* جس نے رمضان کا روزہ اللہ پر ایمان رکھتے ہوئے اور روزہ کو ثواب سمجھتے ہوءے رکھا تو اس کے پچھلے سارے گناہ معاف کر دیئے جاتے ہیں.

اس حدیث کے الفاظ سے یہ معلوم ہوا کہ رمضان کے روزوں سے گناہ اسی وقت معاف ہوگا جبکہ روزہ رکھنے والا دو چیزوں کا التزام کرے ایک تو یہ کہ ایمان کے ساتھ یعنی اللہ کی ذات پر مکمل یقین کے ساتھ روزہ رکھے اور دوسری چیز یہ کہ اس روزہ کو ثواب سمجھتے ہوئے یعنی ثواب کی نیت کے ساتھ روزہ رکھے، یہ نہیں کہ کھانے کا نظم نہیں ہو سکا اس وجہ سے روزہ رکھ لیا، یا اس ڈر سے روزہ رکھ لیا کہ روزہ نہیں رکھیں گے تو لوگ کیا کہیں گے. حالانکہ روزہ کی فرضیت اس سے بھی ساقط ہو جاءے گی، اور اس صورت میں بھی روزہ ہو جاءے گا. مگر ثواب کے حصول اور گناہوں کی معافی کے لئے ضروری ہے کہ ایمان و یقین کے ساتھ اور روزہ کو ثواب کی نیت سے رکھے.

یہ اللہ تعالیٰ کا کتنا بڑا کرم اور احسان ہے کہ ایک ہی عمل سے اللہ تعالیٰ کئی طرح کے انعامات سے نوازتے ہیں، لہذا ہمیں یہ چاہئے کہ مکمل اخلاص کے ساتھ ہم روزہ رکھیں اور اس یقین کے ساتھ کہ اللہ تعالیٰ ہمیں ثواب بھی مرحمت فرمائیں گے اور ہمارے گناہوں کو بھی معاف فرمائیں گے.

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
%d bloggers like this: