غزل

زخم جگر جہاں کو دکھاؤں یا چھوڑ دوں

ازقلم افتخارحسین احسن.
رابطہ نمبر.6202288565

زخم جگر جہاں کو دکھاؤں یا چھوڑدوں.
آنکھوں سے اشک روز بہاؤں یا چھوڑدوں.

بےچارہ پھنس گیا ہے یہاں لاک ڈان میں.
اس کو بلاکے کھانا کھلاؤں یا چھوڑدوں.

سبزی فروش کام پہ جانے سے پیشتر.
ہے کشمکش میں ٹھیلا لگاؤں یا چھوڑدوں.

جس نے میرے وجود پہ خنجر چلادیا.
اس بے وفا کو اپنا بتاؤں یا چھوڑدوں.

احسن یہ سوچتا ہے صبح وشام ہر گھڑی.
خوابیدہ مسلماں کو جگاؤں یا چھوڑدوں.
……………………..

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

یہ بھی پڑھیں
Close
Back to top button
Close
%d bloggers like this: