زبان و ادب

فلسطین چلو

فلسطین چلو
ہاتھوں سے گیا قبلہ، فلسطین چلو
اِسلام ہُوا رُسوا، فلسطین چلو
بِن گورو کفن لاشے، سِسکتے ہوئے تن
ہے حشرسا اِک برپا،فلسطین چلو
جب قبلۂ اوّل ہے تاراج ہُوا
جی کے بھی کروگے کیا؟،فلسطین چلو
بنتے تو فلسطین کے وارِث ہیں یہود
بھولے ہیں ہراک وعدہ،فلسطین چلو
کافِر ہوئے دنیاکے سبھی ایک۔ مگر
مسلم ہے کھڑ اتنہا ،،فلسطین چلو
گرآج نہیں نکلے ، گَنوادوگے حرم
ہے اگلا، قدم کعبہ،،فلسطین چلو
جب موت کے چنگل میں ہو اِنسان پھنسا
توکیاہاتھ کا لُقمہ؟فلسطین چلو
لگ جائے اگرمنھ کو ستمگرکے لہو
گھربھی ہے بڑا خطرہ، فلسطین چلو
بے روح نمازوں میں نہیں لطف کوئی؟
کرناہے وہیں سجدہ،فلسطین چلو
تکبیر سے پڑجاتے ہیں گَردُوں میں شگاف
ڈاکٹرراحتؔ مظاہری،قاسمی

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

یہ بھی پڑھیں
Close
Back to top button
Close
%d bloggers like this: