اہم خبریں

مناظر اسلام مولانا اختر حسین قاسمی بھاگلپوری رح کی زندگی نئی نسل کے لئے مشعل راہ

مدرسہ سلیمانیہ سنہولہ میں منعقد تعزیتی جلسہ سے مقررین کا اظہارِ خیال

سنہولہ بھاگلپور( رپورٹ : محمد سفیان القاسمی،مدرسہ حسینیہ تجوید القرآن دگھی )

مدرسہ سلیمانیہ سنہولہ ہاٹ بھاگلپور میں مورخہ 7 دسمبر سنیچر کو 10 بجے دن مناظر اسلام مولانا اختر حسین قاسمی بھاگلپوری رح کے سانحہ ء وفات پر ایک تعزیتی اجلاس زیر صدارت مولانا غلام رسول صاحب شیخ الحدیث مدرسہ اصلاح المسلمین چمپا نگر منعقد ہوا نظامت کے فرائض مفتی خلیل احمد صاحب قاسمی استاذ مدرسہ اصلاح المسلمین چمپا نگر نے انجام دیئے. اس موقع پر علاقے کے معروف علماء کرام اور دانشوران عظام شریک اجلاس ہوءے اور انھوں نے حضرت والا رحمہ اللہ کی حیات و خدمات کے مختلف گوشوں پر اظہارِ خیال کیا اور اپنے اپنے تاثرات بیان کئے. مقررین نے اپنے خطاب میں کہا کہ مناظر اسلام مولانا اختر حسین قاسمی بھاگلپوری رح ایک ہمہ جہت صلاحیتوں کے مالک تھے اور انھوں نے اپنی صلاحیتوں کا استعمال سنت و شریعت کی اشاعت اور علاقے میں پائی جانے والی بدعات و خرافات کے استیصال کے لئے کیا، اور ان کی خدمات کا دائرہ بہار و جھارکھنڈ سے لیکر بنگال تک پھیلا ہوا ہے. ان کی زندگی بلاشبہ نسل نو کے لیے مشعل راہ کی حیثیت رکھتی ہے.

جن علماء کرام و دانشوران عظام نے خطاب کیا ان میں مولانا محمد عطاء الرحمن صاحب مہتمم الجامعۃ الحبیبیہ پورینی ،مولانا غلام رسول صاحب، مولانا نشاط اختر صاحب فرزند ارجمند مولانا مرحوم، مولانا یاسین صاحب جمعیۃ علماء ہند، مفتی محمد سفیان قاسمی مدرسہ حسینیہ تجوید القرآن دگھی ، مولانا سلیم الدین صاحب مدرسہ بدر العلوم مہگاواں ، مولانا صلاح الدین قاسمی، مولانا محمد اسامہ صاحب قاسمی جامعہ روضۃ القرآن مرغیا چک ،مولانا محمد ثناء الحق صاحب جہازقطعہ، پرو فیسر طاہر صاحب، مولانا سراج صاحب سکریٹری مدرسہ سلیمانیہ سنہولہ ہاٹ.

پروگرام میں ان کے علاوہ اور بھی بہت سی معزز شخصیات موجود تھیں مولانا محمد الیاس ثمر قاسمی الفلاح پبلک اسکول کرما مولانا مقصود کرما ،مولانا محمد فاروق صاحب ناظم اعلیٰ مدرسہ سلیمانیہ سنہولہ ہاٹ ،مولانا محسن اختر مدرسہ مخزن العلوم جٹاواں مفتی شبیر صاحب، مفتی سبحان قیس صاحب، جناب ڈاکٹر نیر صاحب سین پور، محمد نجیب، محمد حسیب، محمد عرفان، فرزندان مولانا مرحوم. جناب منصور صاحب سیریچک قاری اجمل صاحب سیریچک اور دیگر قابل قدر حضرات موجود تھے

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button
Close
%d bloggers like this: