اہم خبریں

مولانا سید شاہ حسن مانی ندوی کا انتقال بڑا ملی علمی اور روحانی خسارہ –

– مفتی محمد ثناء الہدی قاسمی نائب ناظم امارت شرعیہ
مولانا سید شاہ حسن مانی ندوی نےبھی دنیا کو الوداع کہدیا وہ خانقاہ پیر دمڑیا خلیفہ باغ بھاگل پور کے سجادہ نشیں تھے. انکی شخصیت ملی علمی اور روحانی تھی. ایک زمانے میں جمیعت شباب اسلام کے جلسوں میں انکی شرکت کثرت سے ہوا کرتی تھی. وہ معہد العلوم الاسلامیہ چک چمیلی سرائے ویشالی بھی کئ بار تشریف لا چکے تھے. وہ انتہائی سادہ لفظوں میں اپنی بات کہ جاتے تھے. ان کے انتقال سے اس علاقے میں بڑا ملی علمی و روحانی خلا پیدا ہو گیا ہے. ان خیالات کا اظہار امارت شرعیہ بہار اڈیشہ جھارکھنڈ کے نائب ناظم مفتی محمد ثناء الہدی قاسمی نے اپنے تعزیتی پیغام میں کیا ہے. انہوں نے فرمایا کہ ابھی حال ہی میں انہوں نے اپنے بڑے صاحبزادے کی سجادگی کا اعلان کیا تھا اور اہل علم اور سجادگان کی موجودگی میں انکی دستاربندی کرائی تھی. مفتی صاحب نے اپنے تعلقات کا اظہار کرتے ہوئے فرمایا کہ اس خانوادہ سے میرا تعلق قدیم ہے. جس زمانہ میں میں پیر دمڑیا کی حاجی پور شاخ پر کام کر رہا تھا تو میرا آنا جانا پیر دمڑیا کتب خانے کے مخطوطات دیکھنے کیلئے ہوا کرتا تھا. اور مجھے مولانا شاہ شرف عالم ندوی رحمہ اللہ جناب منظر حسین اور شاہ حسن مانی ندوی رحمہ اللہ کی محبتیں اور شفقتیں ملا کرتی تھیں. مفتی محمدثناءالہدی قاسمی نے اس حادثہ پر اہل خاندان سے تعزیت کی او رشاہ صاحب کی مغفرت، بلندی درجات اور پس ماندگان کے لیے صبرو ثبات کی دعا فرمائی

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
%d bloggers like this: