اسلامیات

مکروہات وضو

پاکی اور نماز کے مسائل مدلل، قسط (7) تصنیف: حضرت مولانا محمد منیر الدین جہازی نور اللہ مرقدہ

ناپسندیدہ فعل کو مکروہ کہتے ہیں ۔ اس کی دو قسمیں ہیں: تحریمی اور تنزیہی۔
مکروہ تحریمی: وہ ہے کہ جس کی ممانعت دلیل ظنی سے ثابت ہو۔ اس کا چھوڑنا واجب ہوتا ہے ۔
اور مکروہ تنزیہی : وہ ہے کہ جس کے دلیلوں میں تعارض ہو۔ اور اس کا چھوڑنا اولیٰ ہوتا ہے۔
وضو میں یہ چیزیں مکروہ ہیں:
(۱) پانی میں اسراف کرنا، اگرچہ نہر کے کنارہ ہو ۔ یا حد سے زیادہ کمی کرنا کہ دھونے میں صرف دو چار قطرہ پانی ٹپکے، یہ مکروہ تحریمی ہے ۔
(۲) منھ پر زور سے پانی مارنا۔
(۳) بلاحاجت دنیا کی باتیں کرنا۔
(۴) وضو کرنے میں دوسرے سے مدد لینا۔
(۵) سر کا مسح تین بار کرنا اور ہر بار نیاپانی لینا۔
(۶) خلاف سنت وضو کرنا۔

Tags

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

یہ بھی پڑھیں
Close
Back to top button
Close