اہم خبریں

نماز جماعت میں پانچ افراد کی قید غیر منطقی فیصلہ:جمعیت علمائے ہند

نئی دہلی 10 جون 2020
جمعیۃ علماء ہند کے صدر مولانا قاری سید محمد عثمان منصورپوری و جنرل سکریٹری مولانا محمود مدنی نے بالخصوص یوپی حکومت کی طرف سے مسجد میں نماز جماعت میں پانچ افراد کی قید لگانے کو غیر منطقی فیصلہ قراردیتے ہوئے اسے غلط اور غیر مناسب ٹھہرایا ہے.
انھوں نے استدلال کیا ہے کہ سبھی مذاہب کے طریقہ ہائے عبادت الگ الگ ہوتے ہیں. جہاں تک مسجد کا معاملہ ہے تو مسجد میں نماز اجتماعی طور سے ادا کی جاتی ہے، یہ کوئی انفرادی عمل نہیں ہے اور نہ ہی مسجد میں دوبارہ جماعت قائم کی جاتی ہے.
ایسی صورت میں ایک جماعت میں پانچ لوگوں کی قید لگانا نہ صرف یہ کہ مشکل پیدا کرنے والا عمل ہے بلکہ سرکار کی طرف سے ان لاک- 2کےتحت دیگر شعبئہ حیات میں دی گئی رعایتوں کے بھی منافی ہے.

انھوں نے کہا کہ مسجدوں کے ذمہ داروں کا یہ احساس ہے کہ مسجد کو لے کر جوں کی توں حالت برقرار رکھنے کی کوشش کی گئی ہے. جب شاپنگ مالس، بازار یہاں تک کہ سرکاری دفاتر اور ٹرانسپورٹ میں افراد کی کوئی قید نہیں ہے تو عبادت خانے میں اس طرح کی قید لگانے کا کیا جواز ہے؟ مساجد میں ہر طرح کی طبی ہدایات کی پابندی کی جارہی ہیں. سوشل ڈسٹنسنگ کی شرائط کا بھی لحاظ کیا جارہا ہے. اس کے علاوہ نماز کے وقت ایک شخص پوری طرح سے پاک صاف ہوتا ہے اور اپنے ہاتھ، پیر کو بھی دھوتا ہے.
ایسے میں سرکار کے اس فیصلے کو جمعیۃ علماء ہند غلط اور غیر مناسب تصور کرتی ہے اور حکومت سے اپیل کرتی ہے کہ وہ اپنے فیصلے پر نظر ثانی کریں اور مسجد میں سوشل ڈسٹنسنگ کی شرط کے ساتھ بلا تعین نماز پڑھنے کی اجازت دی جائے. سرکار کا یہ موجودہ فیصلہ بہر صورت نامنظور اور ناقابل عمل ہے.

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
%d bloggers like this: