مضامین

نیپال کی نئی حکومت

مفتی محمد ثناء الہدیٰ قاسمی نائب ناظم امارت شرعیہ پھلواری شریف

نیپال میں وزیر اعظم کے طور پر پشپ کمال داہال عرف پر چنڈ نے نئی حکومت کی باگ ڈور سنبھال لی ہے ، انہوں نے حکومت بنانے کے لیے سابق وزیر اعظم کے پی شرما او لی سے ایک سمجھوتہ کیا ، جس کا خلاصہ یہ ہے کہ ڈھائی سال پر چنڈ حکومت میں رہیں گے اور اس کے بعد نیپال میں سی پی ایم+ یو ایم ای کی حکومت بنے گی ، جس کے سر براہ اُولی بھی بن سکتے ہیں۔
پر چنڈ کی بحیثیت وزیر اعظم یہ تیسری تاج پوشی ہے، پہلی بار 2008ءمیں وہ وزیر اعظم بنے تھے، لیکن یہ مدت کار صرف ایک سال رہی ، دوسری بار2016ءمیں وزیر اعظم بنے، لیکن ایک سال میں ہی وزیر اعظم کی کرسی انہیں چھوڑنی پڑی، اب تیسری باری ہے اور بظاہر سمجھوتے کے مطابق مدت کا ر ڈھائی سال ہو گی ، اس درمیان اتار چڑھاؤ اور اُتھل پُتھل سے بھی انکار نہیں کیا جا سکتا، ہندوستان میں ہم مایا وتی اور بی جے پی کے درمیان نصف نصف مدت کے لئے اقتدار کے سمجھوتے کے اثر کو دیکھ چکے ہیں، جب مایا وتی نے نصف مدت گذرنے کے بعد اقتدار کی منتقلی سے انکار کر دیا تھا، ہم نے محبوبہ مفتی اور بی جے پی کے بے جوڑ اشتراک کا حشر بھی دیکھا ہے ، اس لیے یہ کہنا قبل از وقت ہوگا کہ پر چنڈ آسانی سے اس سمجھوتہ پر عمل کے لیے تیار ہوجائیں گے ، اس قسم کے اشتراک کے پیچھے پر چنڈ کی یہ منشا بھی ہو سکتی ہے کہ ابھی تو خیر سے گذرتی ہے آگے کی خبر خدا جانے ۔
پر چنڈ کے اسی خیال کی وجہ سے ان کا وزیر اعظم بننے کا خواب پورا ہوا، ور نہ صحیح اور سچی بات تو یہ ہے کہ نیپالی کانگریس کے شیر بہادر دیو باکو وزیر اعظم ہونا چاہیے تھا؛ کیوں کہ دو سو پچھہتر(275)ارکان کی نیپالی پارلیمان میں دیوباکی پارٹی کو نواسی (89)سیٹیں ملی تھیں جب کہ پر چنڈ کی ماؤں وادی کمیونسٹ پارٹی صرف بتیس (32)سیٹیں ہی حاصل کر پائی تھی، انتخاب میں پرچنڈ اور دیو با کی پارٹی کا اتحاد بھی تھا، پر چنڈ بضد تھے کہ وزیر اعظم وہی بنیں گے اور صدر بھی انہیں کی پارٹی کا ہوگا، یہ بات دیو با نہیں مان سکتے تھے، اس لیے پر چنڈ اپنے پرانے کمیونسٹ ساتھی اُولی کے گھر پہونچ گیے اور وہاں ان کی دال گل گئی اور وہ وزیر اعظم کی کرسی پر براجمان ہو گیے۔اس واقعہ کو ہندوستانی سیاسی پس منظر میں دیکھیں تو جس طرح مہاراشٹر میں شیو سینا اور بھاجپا نے ساتھ الیکشن لڑا تھا؛لیکن کافی اتار چڑھاؤ کے بعد مہا اگھاری وکاس کی حکومت بن گئی اور وہ بھی شیو سینا کے ایک حصہ کی بغاوت کی وجہ سے ٹوٹ گئی، نیپال میں بھی ایسا ہی ہوا کہ الیکشن پر چنڈنے دیو با کے ساتھ لڑا اور حکومت اُولی کے ساتھ بنایا۔
ہندوستان کی طویل سر حد نیپال سے لگتی ہے ، پاسپورٹ کے بغیر آمد ورفت کی سہولت کی وجہ سے ہندو نیپال کی عوام کے رشتے ایک دوسرے سے انہتائی مضبوط ہیں اور کہنا چاہیے کہ ان کے درمیان بیٹی، روٹی کا رشتہ ہے، یعنی رشتہ داریاں اور تعلقات خوب ہیں، اور معاشی اعتبار سے ایک کا دوسرے سے رشتہ بھی مضبوط ہے، حکومتی سطح پر در آمد ، بر آمد کا تناسب اس قدر ہے کہ ہندوستان ، نیپال کا سب سے بڑا تجارتی شریک ہے ، 2021ءمیں نیپال جن اشیاءکی سپلائی غیر ملکوں میں کرتا ہے، اس کا 53.1فی صد ہندوستان کو برآمد کیا تھا، اور ہندوستان سے اس نے 68.3فی صد در آمد کیا تھا۔
1996سے 2006تک نیپال خانہ جنگی کا شکار تھا، ہندوستان نے اس بد ترین صورت حال کو درست کرنے میں اہم رول ادا کیا تھا، نومبر 2006میں نیپال کی حکومت اور سات ماؤنواز پارٹیوں کے درمیان نئی دہلی میں ایک معاہدہ پر دستخط کے نتیجے میں وہاں پھر سے جمہوری حکومت کے قیام اور استحکام کی راہ ہموار ہوئی تھی اور اس کا سارا سہرا ہندوستان کو جاتا ہے ؛ لیکن پر چنڈ اور اُولی ہندوستان کی اس جد وجہد کو ماضی میں فراموش کرتے رہے ہیں، ان کا جھکاؤ چین کی طرف زیادہ ہے، انہوں نے اپنے سابقہ دور میں ہندوستان کے کالا پانی ، لییو لیکھ لمپا دھورا پر اپنا دعویٰ پیش کر دیا تھا اور نیپال کے نقشہ میں ان علاقوں کو شامل کر دیا تھا، ہند نزاد نیپالی شہری مدھیشی کا معاملہ بھی ان کے دور میں گرمایا تھا، اگر ان کے نظریات میں تبدیلی ہوئی تو ہندوستان سے تعلقات اچھے رہیں گے ، اور اس کی ہمہ جہت ترقی کی راہ ہموار ہو سکے گی اور اگر نیپال نے چین کا رخ کیا تو یقینی طور پر ہندوستان سے تعلقات بگڑ یں گے ، کیوں کہ ہند، چین تنازعہ ان دنوں شباب پر ہے اور دشمن کے دوست کو دشمن سمجھنے کی روایت قدیم ہے، اس کا خمیازہ نیپال کو بھگتنا پڑے گا ، کیوں کہ چین کی پالیسی ملکوں کو قرض کے جال میں پھنسا کر اسے بے بس کرنے کی رہی ہے، اسے سری لنکا کے حالات وواقعات سے سبق سیکھنا چاہیے، ہندوستان سے دوستی نیپال کے لیے ہر حال میں خیر کا باعث ہوگا۔وزیر اعظم نریندر مودی کا پر چنڈ کو سب سے پہلے مبارک باد دینے کی یہی معنویت ہے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

یہ بھی پڑھیں
Close
Back to top button
Close
%d bloggers like this: