اسلامیات

پاکی کا اسلامی نظریہ

محمد یاسین جہازی

اسلام کے فطری دین ہونے کی ایک خوبی یہ بھی ہے کہ اس نے زندگی میں قدم قدم پر پیش آنے والے تمام حالات و واقعات کے بارے میں انسانوں کی رہ نمائی فرمائی ہے اور رسول اللہ ﷺ کی سیرت اس کے عملی نمونے کے طور پر ہمارے سامنے احادیث کی شکل میں موجود ہے۔ انھیں ہدایات حیات کی ایک کڑی ہے: پاکی اور صفائی۔ پاکی اور صفائی کی دوسرے مذاہب میں جو بھی اہمیت ہو، لیکن اسے پوجا اور عبادت کا مقام حاصل نہیں ہے، لیکن اسلام میں یہ عبادت؛ بلکہ مدارِ اسلام: ایمان کا نصف حصہ یہی پاکی ہی ہے۔پاک صاف اور صاف ستھرا رہنے والوں کی قرآن نے تعریف و توصیف کی ہے۔ ارشاد خداوندی ہے کہ
فِیہِ رِجَالٌ یُحِبُّونَ ان یَّتَطَھَّرُوا واللّٰہُ یُحِبُّ المُتَطَھِّرِینَ۔ (التوبہ، ۸۰۱)
اس (قبا بستی) میں ایسے لوگ ہیں، جو (ڈھیلے کے ساتھ پانی سے بھی) پاکی حاصل کرتے ہیں۔ پاک صاف بندے اللہ کو پسند ہیں۔ بدن تو انسانی وجود کا جوہر ہے؛ بدن کے ساتھ جو عرض ہے، یعنی کپڑے کی پاکی صفائی پر بھی توجہ دینے کی ہدایت کی گئی ہے۔ قرآن کہتا ہے کہ
وَ ثِیَابَکَ فَطَہِّر، (سورہ المدثر، آیت: ۴، پارہ ۹۲)
اور اپنے کپڑے کو پاک رکھو۔احادیث میں بھی پاکی و صفائی پر بہت زیادہ زور دیا گیا ہے۔ چنانچہ ایک حدیث میں ہے کہ
الطَّھُورُنِصفُ الِایمَانِ۔ (ترمذی، باب منہ، کتاب الدعوات)
پاکی آدھا ایمان ہے۔ ایک دوسری حدیث میں ہے کہ
مِفتَاحُ الصَّلاۃِ الطَّھُورُ،(ابو داود، کتاب الطھارۃ، باب فرض الوضو)
نماز کی چابی پاکی ہے۔۔المختصر قرآن واحادیث میں پاکی و صفائی پر بہت زیادہ زور دیا گیا ہے، اسی وجہ سے یہ صرف زندگی کا مہذب عمل ہی نہیں؛ بلکہ اس کے ساتھ عبادت بھی ہے۔ اس لیے آئیے ہم غور کریں کہ پاکی کی کیا اہمیت اور حقیقت ہے اور اس کے ساتھ اس میں کیا کیا اسرارو حکم پوشیدہ ہیں۔
پاکی کی اہمیت و حقیقت
حضرت شاہ ولی اللہ محدث دہلوی ؒ نے دین اسلام کی بنیادوں کا خلاصہ کرتے ہوئے تحریر فرمایا ہے کہ شریعت کے اگرچہ بہت سے ابواب ہیں، اور ہر باب کے تحت سیکڑوں احکام ہیں، لیکن اپنی بے پناہ کثرت کے باوجود چار اصولی عنوان کے تحت آجاتے ہیں: طہارت، اخبات، سماحت اور عدالت۔ (حجۃ اللہ البالغۃ، جلد اول، القسم الاول، المبحث الرابع، باب ۴، الاصول التی یرجع الیھاتحصیل الطریقۃ الثانیۃ)۔اس سے معلوم ہوتا ہے کہ طہارت شریعت کا ایک چوتھائی حصہ ہے اور یہ دین کا ایک اہم شعبہ اور بذات خود مطلوب عبادت ہے۔
ابو حامد غزالی ؒ طہارت و پاکیزگی سے متعلق قرآن کی آیتیں اور احادیث لکھنے کے بعد تحریر فرماتے ہیں کہ ان ارشادات پر غور کرنے والے بہ خوبی سمجھ سکتے ہیں کہ ان ارشادات سے صرف ظاہری ہی پاکی مراد نہیں ہے؛ بلکہ باطنی پاکیزگی بھی مطلوب ہے۔(احیاء علوم الدین، جلد اول،کتاب اسرار الطہارۃ)۔شاہ صاحب نے مذکورہ بالا حوالے کے مقام پر طہارت کی حقیقت بھی بیان فرمائی ہے، جس کا خلاصہ یہ ہے کہ پاکی اور ناپاکی انسانی روح اور طبیعت کی دو الگ الگ حالتوں کا نام ہے۔ طہارت کی حالت فرشتوں کی حالت سے بہت زیادہ مناسبت رکھتی ہے، اس لیے ہر وقت پاک و صاف رہنے سے ملکوتی کمالات و صفات انسان کے اندر پیدا ہوتے ہیں۔ اور ناپاکی کی حالت شیاطین کی حالت ہوتی ہے، اس لیے جو شخص ہر وقت ناپاکی میں ڈوبا میں رہتا ہے، شیاطینی وساوس اور روح کی ظلمت اس کو گھیر لیتی ہے۔
پاکی کی صورتیں
قرآن و احادیث کے اشاروں سے پتہ چلتا ہے کہ پاکی و ناپاکی کی چار صورتیں ہیں:
(۱) باطنی پاکی و ناپاکی۔ (۲) معنوی پاکی و ناپاکی۔ (۳)ظاہری پاکی و ناپاکی۔ (۴) دلوں کی پاکی و ناپاکی۔
باطنی پاکی و ناپاکی سے مراد یہ ہے کہ انسان خود کو کفرو شرک کی ناپاکی اور گندگی سے پاک و صاف کرلے، کیوں کہ اللہ تعالیٰ کے ساتھ شریک ٹھہرائے جانے والے بت ناپاکی ہیں۔ اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے کہ
فاجتنبوا الرجس من الاوثان (سورہ الحج، آیت: ۰۳، پارہ: ۷۱)
بتوں کی گندگی سے بچو۔ بتوں کی پوجا کرنا پلیدی اور گندگی سے کھیلنا ہے اور جوکوئی پلیدی میں لت پت ہوجائے، اس سے پاکی و صفائی حاصل کرنا ضروری ہے۔ یہی وجہ ہے کہ اگر کوئی شخص اسلام قبول کرتا ہے، یعنی کفر و بت کی گندگی سے نجات حاصل کرنا چاہتا ہے اور اسلام کی پاک دامن میں پناہ لینا چاہتا ہے، تو سب سے پہلے اسے حکم دیا جاتا ہے کہ پاک کلمہ زبان پرلانے کے لیے غسل کرنا پڑے گا۔ اور انسان کے لیے کفر کی گندگی سے بڑی کوئی اور ناپاکی نہیں ہے اور اسلام کی پاکیزگی سے بہتر کوئی اور پاکیزگی نہیں، انسان خوب نہائے، سوچھتا کے بڑے بڑے ابھیان چلائے،لیکن اگر اس باطنی ناپاکی سے خود کو پاکیزہ نہیں بناتا، وہ کبھی بھی پاک اور صاف نہیں ہوسکتا۔
دوسری پاکی و ناپاکی معنوی پاکی وہ ناپاکی ہے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ انسان حدث سے طہارت، یعنی جن حالتوں میں غسل یا وضو واجب اور مستحب ہے، ان حالتوں میں غسل یا وضو کرکے شرعی پاکی حاصل کرے۔ اگرچہ بدن پر ظاہری ناپاکی کی کوئی چیز لگی ہوئی نہ ہو۔ مثال کے طور پر نماز پڑھنے کے لیے، وضو کرنا ضروری ہے۔اب اگر کسی کے بدن پر ظاہری نجاست لگی ہوئی ہو یا نہ ہو، وضو نہیں ہے، تو اس کے لیے وضو کرنا ضروری ہوگا۔ خلاصہ کلام یہ کہ ایک مسلمان کے لیے باطنی پاکی حاصل کرنے کی طرح عبادات کو انجام دینے کے لیے معنوی طور پر بھی پاک و صاف رہنا ضروری ہے۔
تیسری پاکی و ناپاکی ہے: ظاہری پاکی و ناپاکی۔اس کا مطلب یہ ہے کہ ظاہری نجاست و گندگی سے اپنے جسم، کپڑے اور جگہ کو پاک و صاف رکھنا۔آپ نے چھوٹا استنجا کیا یا بڑا استنجا کیا، اس وقت ظاہری بدن پر لگی ناپاکی اور گندگی کو آپ نے دھویا، تو آپ نے یہ ظاہری پاکی حاصل کی۔ اسی طرح جسم کے مختلف حصوں میں خود بخود گندگیاں اور میل و کچیل پیدا ہوتی رہتی ہیں، جیسے دانت، منھ، ناک، ناخن وغیرہ میں خود بخود گندگی پیدا ہوتی رہتی ہے، ان چیزوں سے پاکی و صفائی حاصل کرنا بھی انسان کے لیے ضروری ہے۔ اس تیسری قسم کے بارے میں نبی کریم ﷺ کی ہدایت ہے کہ
عشر من الفطرۃ: (۱)قص الشارب،(۲)و اعفاء اللحیۃ، (۳) والسواک، (۴)و استنشاق الماء، (۵) و قص الاظفار، (۶) و غسل البراجم، (۷) و نتف الابط، (۸) و حلق العانۃ، (۹) و انتقاص الماء، (۰۱) والمضمضۃ۔ (المسلم، کتاب الطہارۃ، باب خصال الفطرۃ)
دس چیزیں فطرت میں سے ہیں: مونچھ تراشنا۔ داڑھی بڑھانا۔ مسواک کرنا۔ ناک صاف کرنا۔ ناخن تراشنا۔ انگلیوں کے پوروں میں پھنسی گندگیوں کو صاف کرنا۔ بغل کی صفائی کرنا۔ زیر موئے ناف کی صفائی۔ استنجا۔ کلی کرنا۔ایک دوسری حدیث میں ایک اور چیز کااضافہ ہے ختنہ کرانا۔
اس حدیث کا خلاصہ یہ ہے کہ صفائی انسان کے لیے ایک فطری عمل ہے۔ ایک صاحب عقل، نستعلیق اورسلیم الطبع آدمی کبھی ان صفائیوں سے گریز نہیں کرسکتا۔آئیے اب یہ غور کریں کہ شریعت نے کسی چیز کو تراشنا صفائی کیو ں قرار دیا ہے اور کسی کو بڑھانا پاکیزگی کا ذریعہ کیوں ٹھہرایا ہے۔
(۱)جہاں تک مونچھ تراشنے کی بات ہے تو اس کی وجہ یہ ہے کہ مونچھ بعینہ ناک کے نیچے اور ہونٹ کے اوپر ہوتی ہے۔ ناک سانس لینے کا ذریعہ ہے اور سانس سے ہی زندگی برقرار رہتی ہے۔ اور نیچے منھ ہے، جو بقائے زندگی یعنی کھانے پینے کی جگہ ہے۔ اب اگر مونچھ میں لمبے لمبے بال رکھے جائیں، تو ظاہر سی بات ہے، بالوں میں پھنسی گندگی یا تو سانس کے ذریعے اندر پہنچے گی یا پھر منھ کے ذریعے۔ اور اگر اندر گندگی پہنچ جائے، تو انسان بیماری وغیرہ میں مبتلا ہوسکتا ہے۔ اس لیے اس کا حکم دیا کہ مونچھ کو تو صاف ہی کردو۔
(۲)داڑھی بڑھانا، یہ دوسری فطری بات ہے۔داڑھی مردوں کی شان ہے اور مرد ہونے کی سب سے بڑی علامت ہے۔ اللہ تعالیٰ نے داڑھی مردوں کو اسی لیے عطا کی ہے تاکہ مذکرو مونث میں واضح فرق ہوسکے۔ اس کی فطری چیز ہونے کی ایک وجہ تو یہ تھی اور دوسری وجہ یہ ہے کہ داڑھی کے بال چوں کہ نیچے کی طرف لٹکتے ہیں، جہاں نہ تو سانس لینے کی مشین ہے اور نہ کھانا کھانے کی جگہ، لہذا اس کے بالوں کی وجہ سے صحت کو کوئی نقصان نہیں پہنچ سکتا۔ علاوہ ازیں جب دن رات میں وضو کے لیے پانچ پانچ مرتبہ داڑھی کے بالوں کو دھویا جائے گا، تو اس میں گندگی کا کوئی سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔اس لیے داڑھی بڑھانا ایک فطری امر ہے۔
(۳) تیسری چیز مسواک کرنا ہے۔انسان اگر دانت کی صفائی کا خاص خیال نہیں رکھتا ہے، تو کئی طرح کی بیماریاں پیدا ہوجاتی ہیں: دانت میں کیڑے لگنے لگتے ہیں، اس میں پانی بھی لگتا ہے، گندگی کی وجہ سے مسوڑے کمزور ہوجاتے ہیں اور شدید درد شروع ہوجاتا ہے، جس کی وجہ سے کھانا پینا دشوار ہوجاتا ہے۔ علاوہ ازیں منھ کی صفائی نہ ہونے کی وجہ سے اس میں بدبو پیدا ہوجاتی ہے۔ یہ بدبو ایسی پیدا ہوجاتی ہے کہ محفل میں بات کرو تو بدبو، کسی کے سامنے منھ کھولو، تو بدبو، اپنوں سے سے قریب ہو تو بدبو کی وجہ سے پریشانی۔بہر کیف ان تمام پریشانیوں کا واحد علاج ہے کہ انسان منھ کی صفائی کرے اور اس کے لیے مسواک سے بہتر کوئی چیز نہیں ہے۔آج کل مارکیٹ میں ایک سے ایک ٹوٹھ پیسٹ بھی دستیاب ہیں، جس سے یہ سمجھا جاتا ہے کہ مسواک سے زیادہ منھ کی صفائی کرتا ہے۔ چلو ہم مان لیتے ہیں کہ کیمکل اور دوائی کے اثرات کی بنیاد پر وہ زیادہ صفائی کرتے ہیں، لیکن دیکھا یہ بھی گیا ہے کہ ٹوٹھ پیسٹ کرنے والے کبھی ان کیمکل کے اثرات سے متاثر ہوجاتے ہیں اور دانت میں کئی طرح کی بیماریاں بھی پیدا ہونے لگتی ہیں۔ اگر فوری طور پر وہ صفائی زیادہ کرتے ہیں، تو کبھی کبھی اس کا سائڈ ایفکٹ بھی ہوجاتا ہے۔ اس کے مقابل نبی کریم صلیٰ اللہ علیہ وسلم کے بتائے طریقوں میں کبھی بھی سائڈ ایفیکٹ نہیں ہوتا۔
(۴) ناک کی صفائی بھی ایک فطری امر ہے۔ کیوں کہ گردو غبار جب اڑتے ہیں، تو کہیں پہنچے یا نہ پہنچے ناک کے خیشوم میں ضرور پہنچ جاتی ہے۔ آپ اگر کمرے کی صفائی کر رہے ہیں، تو کہیں دھول کے اثرات دکھے یا نہ دکھے، ناک میں ضرور پہنچ جاتی ہے، اور چوں کہ یہ سانس لینے کی جگہ ہے، اس لیے اس کی صفائی انتہائی ضروری ہے۔
(۵) ناخن تراشنا بھی صفائی کی چیز ہے۔ کیوں کہ اس میں گندگی بھی پھنستی ہے اور انسان کو کریہہ المنظر بھی بناتا ہے۔
(۶) انگلیوں کے جوڑوں میں بھی گندگی پھنستی ہے۔ اگر برابر اس کی صفائی نہیں کی جاتی ہے، تو جلدی امراض پیدا ہوجاتے ہیں۔چمڑے میں خشکی، موٹا پن، کھردرا پن اور کانٹے دار پھنسیاں پیدا ہونے لگتی ہیں۔ اس لیے ان کی صفائی ضروری ہے۔
(۷) بغل کے بالوں کو اکھاڑنا بھی صفائی کے لیے ضروری ہے، کیوں کہ گندگی جمع ہونے کی وجہ سے بدبو پیدا ہونے لگتی ہے اور بیماریاں جنم لینے لگتی ہیں۔
(۸) زیر موئے ناف بھی تراشنا ضروری ہے، کیوں کہ وہاں بھی گندگی جمع ہوتی ہے، قوت باہ کو کمزور کردیتی ہے۔ اس لیے صفائی ضروری ہے۔
(۹)استنجا کرنا۔
(۰۱) کلی کرنا
(۱۱) ختنہ کرانا
ان ہدایات سے آپ اندازہ لگاسکتے ہیں کہ اسلام نے ظاہری و باطنی ہر طرح کی گندگی سے پاکی و صفائی کا کس قدر اہتمام کیا ہے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

یہ بھی پڑھیں
Close
Back to top button
Close
%d bloggers like this: