اہم خبریں

کووڈ 19 کے پیش نظرنظام مساجد کے سلسلہ میں ضروری اپیل

مولانا خالد سیف اللہ رحمانی صاحب کی اپیل

اسلام میں انسانی زندگی کی حفاظت کو بڑی اہمیت حاصل ہے، اور جو شخص بیماری میں مبتلا ہو، یا جس کے بیمار ہونے کا اندیشہ ہو، یا جس کی وجہ سے دوسرے بیمار پڑ سکتے ہوں، ان کے لئے خصوصی رعایتیں بھی رکھی گئی ہیں، اور اپنے آپ کو اور دوسروں کو نقصان سے بچانے کا حکم بھی دیا گیا ہے، یہاں تک کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے کوڑھ کی بیماری میں مبتلا شخص کو بیعت کے لئے آپ کی مجلس میں حاضر ہونے سے منع فرمایا۔
اِس وقت کورونا وائرس کے نام سے جو وبا ء پھوٹ پڑی ہے، اس نے پوری دنیا کو اپنی لپیٹ میں لے لیا ہے، یہ بیماری ایک دوسرے کے قریب رہنے، مصافحہ کرنے یہاں تک کہ کسی چیز کو چھونے اور پھر اس چھوئی ہوئی چیز کو دوسرے شخص کے چھونے کی وجہ سے بھی پھیلتی ہے، جہاں لوگوں کا اجتماع ہو وہاں تیزی سے اس کے متعدی ہونے کا اندیشہ ہے، مسجدوں میں نمازیوں کا جمع ہونا بھی ماہرین کی رائے کے مطابق تیزی کے ساتھ اس بیماری کے پھیلنے کا سبب ہو سکتا ہے، ان حالات میں عبادت کی اہمیت اور انسانی زندگی کی حفاظت کے سلسلہ میں شرعی ہدایات کو سامنے رکھتے ہوئے تمام برادران اسلام سے اپیل کی جاتی ہے کہ جب تک حالات معمول پر نہ آجائیں:
۱۔ مسجدوں میں اذان اور جماعت ہو، لیکن مسجد کے امام ومؤذن خادم اور جہاں یہ نہ ہوں وہاں پڑوسی کے چند صحت مند حضرات کی جماعت ہو، محلہ کے لوگ اپنے اپنے گھروں پر ہی نماز ادا کریں، موجودہ حالات کے پیش نظر اس میں کوئی حرج نہیں، اور ان شاء اللہ ان کے اجر میں کوئی کمی نہیں ہوگی۔
۲۔ مسجد میں نماز مختصر بقدر فرض ادا کی جائے۔
۳۔ مساجد میں بھی احتیاطی تدابیر کا پورا لحاظ رکھا جائے۔
۴۔ جمعہ کی نماز بھی چار پانچ نمازیوں کے ذریعہ ادا کی جائے، اور خطبہ ونماز صرف اس قدر ہو جتنا فقہاء نے واجب قرار دیا ہے، بقیہ حضرات اپنے گھروں میں نماز ظہر ادا کریں۔
۵۔ استغفار اور دعاء کی کثرت کی جائے۔
۶۔ نمازوں کے بعد قرآن وحدیث کے درس اور جمعہ سے پہلے خطاب کے سلسلہ کو فی الحال موقوف کر دیا جائے۔

26/رجب 1441ھ
22/مارچ2020ء خالد سیف اللہ رحمانی

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
%d bloggers like this: