مضامین

کھٹنئی میں مجلس عاملہ کی نشست قسط نمبر 13

ماسٹر محمد شمس الضحیٰ کھٹنوی سابق صدر جمعیت علمائے سنتھال پرگنہ

کھٹنئی میں مجلس عاملہ کی نشست
مورخہ21/ دسمبر1981ء بروز سوموار شام کو کھٹنئی میں مجلس عاملہ کی خصوصی نشست بلائی گئی۔ مولانا محمد عرفان مظاہری جہاز قطعہ کی تلاوت کے بعد گذشتہ کارروائی کی خواندگی اور توثیق کی گئی۔ اور درج ذیل تجاویز پیش ہوکر منظور کی گئیں۔
(1) چند سالوں سے دیوبند میں ناسازگاری چل رہی ہے۔ یہ بات اجلاس صد سالہ (دارالعلوم دیوبند بتاریخ 21،22،23/ مارچ 1980)کے موقع پر سامنے آئی۔ مشاہدین نے پس منظر اور موجودہ حالات کے مد نظر آئندہ کے حالات کا اندازہ کرنا شروع کردیا۔ داخلی بد نظمی کی وجہ سے کئی طرح کے نقصانات ہوئے قومی و عوامی ادارہ کی ذمہ دارگورننگ باڈی یعنی مجلس شوریٰ ہے۔کسی بھی شخصیت کی خاطر ادارہ کی قربانی یا زبوں حالی کسی بھی حال میں مناسب اور گوارا نہیں ہے۔ طلبہ یعنی مہمان رسول ﷺ کو تعلیمی سلسلہ منقطع کرکے اپنے وطن لوٹنے پر مجبور کیاجانا انتہائی افسوس ناک ہے؛ مگر باشندگان دیوبند قابل تحسین و تبریک ہیں کہ تمام طلبہ کو رکھ کر طعام و قیام کے ساتھ تعلیمی سلسلہ کو جاری رکھنے کا نظم کیا۔ طلبہ عزیزاور مشفق اساتذہ بھی سراہنے کے لائق ہیں کہ حالات کی ناسازگاری کی پرواہ کیے بغیر کیمپ میں ہی درس و تدریس کا سلسلہ جاری رکھا۔ اس کے ساتھ ہی اللہ کے وہ مخلص بندے اور ہمدرد دین قابل قدر ہیں، جنھوں نے وقت کی اہمیت کو محسوس کرتے ہوئے ہر طرح کی مدد فرمائی۔ اللہ تعالیٰ جملہ حضرات کو جزائے خیر عطا فرمائے آمین۔
مجلس شوریٰ دارالعلوم دیوبند ہی ذمہ دار اور حقدار ہے کہ جملہ حالات کا تجزیہ کرتے ہوئے بہت جلد اس طرح ٹھوس اقدام کرے کہ آئندہ کے لیے خلفشار کا دروازہ بند ہوجائے۔ اس معاملہ میں گذشتہ کی طرح تھوڑی سی رعایت یا سہولت سے پھر مزید دشواریوں کا سامنا ہوسکتا ہے۔
(2) ضلع میں مزید دورہ کے واسطے وفود کی ترتیب دیتے ہوئے دوبارہ گذارش کی گئی کہ تعمیری پروگرام کی اہمیت کے لحاظ سے ایک دو گاوں کو منتخب کرکے محنت کی جائے۔اور حسب سہولت مقامی ہمدردوں کی مدد سے علاقائی مقامات کا مسلسل دورہ کرکے فیلڈ ہموار کرنے کی کوشش کی جائے تاکہ آئندہ کا نشانہ پورا کرنے میں آسانی ہو۔ حاضرین نے حسب ذیل مقامات کا انتخاب کیا:
۱۔ مولوی محمد ظہور الحق کھٹنئی لوبندھا چھوٹی ا ملو۔ ۲۔ مولانا محمد عرفان مظاہری جہازقطعہ، ریسمبا کپیٹہ۔ ۳۔ مولانا محمد منصور احمد قاسمی بیلسر، چورا، سیار ڈیہہ۔ ۴۔ ماسٹر محمد شمس الضحیٰ کھٹنئی ڈانگا پاڑہ۔ ۵۔ مولانا محمد حبیب الرحمان جہاز قطعہ کدما جھپنیاں۔ ۶۔ مولوی محمد مبارک کریم لوگائیں۔ ۷۔ مولانا محمد بشیر الدین مظاہری، امبہ۔ ۸۔ مولانا محمد بدرالدین قاسمی مورنئے۔ ۹۔ مولوی صغیر احمد مورنئے برمترا۔
(3) شرعی پنچایت کی کارکردگی کا جائزہ لیتے ہوئے بتایا گیا کہ شرعی پنچایت کی نشست 16/ دسمبر1981ء سنیچر کی شام مورنئے تھانہ موہن پور میں ہورہی ہے۔ ضلع میں معلومات کراکر اپنے مقدمات کے حل کے لیے عوام کو ترغیب دلائی جائے۔
(4) مسلم فنڈ کی شاخوں کی توسیع پر زور دیا جائے۔
(5) دینی تعلیمی جدوجہد کو کامیاب بنانے کے لیے ضلع کی سطح پر دینی تعلیمی کانفرنس کرنے کی ضرورت ہے۔ اس سلسلہ میں تحریک و کوشش جاری ہے۔
(6) سماجی اصلاح کی غرض سے بھی کچھ قدم بڑھائے گئے ہیں۔ زیادہ سے زیادہ حلقوں میں کاموں کو بڑھانے کی ضرورت ہے۔
(7) آسام کی صورت حال کے پیش نظر کہا گیا کہ مرکزی حکومت دانشمندانہ اقدام کرکے فوری طور سے مسائل حل کرنے کی کامیاب کوشش کرے۔
(8) ریاستی حکومت نے اردو سے متعلق جن مراعات کا اعلان کیا ہے، اسے جلد سے جلد مکمل طور پر لاگو کیا جائے۔
(9) جمشید پور کے فسادات کے متعلق کمیشن نے اپنی رپورٹ پیش کردی ہے۔ فسادات کو روکنے کے لیے حکومت فوری طور پر کارروائی کرے۔
(10) معتبر ذرائع سے معلوام ہوا کہ موضع موچہرہ تھانہ پوڑیا ہاٹ میں اکثریتی فرقہ کے چند افراد ذاتی بغض و عناد کی وجہ سے چند مسلم گھرانوں بالخصوص ماسٹر عبد المنان کو پریشان کر رہے ہیں۔ اس سلسلہ میں چھان بین کے بعد مناسب کارروائی کرکے اقلیتی فرقہ کو اطمینان دلانے کی ضرورت ہے۔
میٹنگ مجلس عاملہ
27/ دسمبر1981ء بروز اتوار بوقت ۸/ بجے صبح بمقام مدرسہ اسلامیہ مورنئے تھانہ موہن پور مجلس عاملہ کی ایک خصوصی نشست ہوئی۔ رسمی کارروائی کے بعد درج ذیل تجاویز منظور کی گئیں۔
(1) ہم باشندگان مورنئے ضلع جمعیۃ علماء سنتھال پرگنہ ایک اجلاس عام منعقد کر کے جمعیۃ علماء کے تعلیمی جدوجہد کو کامیاب بنانا چاہتے ہیں۔
(2) مارچ کے پہلے ہفتہ میں کانفرنس کرنے سے سہولت رہے گی، اس کی تیاری کے لیے31 / جنوری1982ء اتوار کو ایک میٹنگ بلاکر خاکہ تیار کیا جائے۔ صدر ضلع سے گذارش ہے کہ ریاستی ذمہ داروں سے بذریعہ خط وکتابت شرکت کی گذارش کی جائے۔
(3)ہم لوگوں نے اقتصادی پروگرام کو مد نظر رکھتے ہوئے مسلم فنڈ کا قیام ضروری سمجھا اور فوری طور سے چند حضرات نے رقم جمع کرکے ممبری قبول کی۔ اس کی توسیع کے لیے بھی ہم لوگ کوشش کریں گے۔ موجودہ ممبروں میں سے ذمہ داروں کا انتخاب عمل میں آیا۔
مجلس عاملہ کی خصوصی میٹنگ
14/ جنوری1982ء بروز جمعرات شام ۷/ بجے جامع مسجد جہاز قطعہ میں مجلس عاملہ کی ایک خصوصی میٹنگ ہوئی۔ جس میں ابتدائی کارروائی کے بعد چند تجاویز منظور کی گئیں۔
اجلاس مجلس عاملہ
مورخہ13/ فروری 1983ء بروز اتوار کھٹنئی میں مجلس عاملہ کا ایک جلسہ کیا گیا، جس میں ضلعوں کے اکثر حصوں سے مدعوین خصوصی شریک ہوئے۔ قاری محمد مقصود عالم کی تلاوت کے بعد گذشتہ کارروائی کی توثیق کی گئی اور درج ذیل تجاویز منظور کی گئیں:
(۱) ملک میں بڑھتی بے روزگاری، بد امنی اور فرقہ وارانہ فسادات کے بڑھتے رجحانات کو دیکھ کر جمعیت علمائے ہند نے دہلی میں 21/ فروری 1983ء سے ملک و ملت بچاو تحریک کے تحت ”جیل بھرو تحریک“ چلانے کا فیصلہ کیا ہے جس کو کامیاب بنانے کے لیے جانی و مالی قربانی پیش کی جائے۔
(۲) دلی جانے والوں کے لیے سفر خرچ کا اتنظام کیا جائے گا تاکہ لوگوں کو آسانی ہو۔
چنانچہ اس تحریک میں بڑی تعدا د میں اس ضلع سے لوگ شریک ہوئے اور تحریک کو کامیاب بنانے میں اپنا کردار ادا کیا۔
نشست مجلس عاملہ
مورخہ29/ جولائی 1983ء کو بروز جمعہ بعد نماز مغرب کھٹنئی میں مجلس عاملہ کی ایک میٹنگ ہوئی۔ مولانا محمد حدیث کی تلاوت سے مجلس کا آغاز ہوا۔ اور درج ذیل تجاویز پاس ہوئیں۔
(۱) حکیم الاسلام حضرت مولانا قاری محمد طیب صاحب نور اللہ مرقدہ (1898-17/ جولائی 1983)سابق مہتمم دارالعلوم دیوبند کے سانحہ ارتحال کو ناقابل تلافی نقصان تصور کرتے ہوئے ان کے اعزا و احباب کے غم میں جمعیت علمائے ضلع سنتھال پرگنہ برابر کی شریک ہے۔ اور دعا ہے کہ اللہ تعالیٰ جنت الفردوس میں اعلیٰ مقام عطا فرمائے اور پسماندگان کو صبر جمیل مرحمت فرمائے آمین۔
(۲) ممبرسازی کی تحریک کو کامیاب کرنے کے لیے 11/ ستمبر1983ء، اتوار کی شام کو ضلع جمعیت کی میٹنگ بلاکر تحریک کو کامیاب بنانے کی شکلوں پر غور و خوض کیا جائے۔ (لیکن کھیتی کی مشغولیت کی وجہ سے ذمہ دار تشریف نہ لاسکے)

Tags

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
%d bloggers like this: