اسلامیاتمضامین

کیا جہیز کا سامان جلسہ میں ہی دینا ضروری ہے یا رقم سے بھی مدد کی جا سکتی ہے؟

مفتی محمد سفیان القاسمی
مدرسہ حسینیہ تجوید القرآن دگھی گڈا جھارکھنڈ

مسئلہ یہ ہے کہ غریب بچیوں کے لئے اگر جہیز کا انتظام نہیں ہوتا ہے تو ان کی شادی نہیں ہوتی ہے، تو اب کیا کریں ان کے گھر والوں کے پاس انتظام ہے نہیں، اور اگر جہیز نہیں دیتے ہیں تو وہ بچیاں گھر میں بیٹھی رہتی ہے، اور گھر میں بیٹھے رہنے کی صورت میں جو قباحت ہے وہ جہیز کی قباحت سے زیادہ ہے لہذا ان کے جہیز کے لئے اگر کوئی تنظیم انتظام کرے تو اس میں کیا حرج ہے، یہ بھی تو غریب کی ہی مدد ہے، پھر یہ ثواب کا کام کیسے نہیں ہوگا؟

بعض لوگوں نے کچھ اس قسم کے بھی سوالات کئے ہیں، اس سلسلے میں عرض یہ ہے کہ اگر آپ جہیز کو درست اور ثواب کا کام سمجھتے ہیں تو پھر کوئی بات نہیں، گاؤں گاؤں میں جہیز کمیٹی بنائیے، جہیز کا چندہ کرنے کے لئے ضلع اور صوبہ لیبل پر تنظیم بنائیے بلکہ آل انڈیا جہیز کونسل بنائیے خوب چندے کیجئے بڑے بڑے جلسے کیجئے، اور ان جلسوں میں جہیز کے سامانوں کا گودام بنا کر خوب نمائش کیجئے، لیکن اگر جہیز کو غیر اسلامی رسم، بد ترین لعنت اور معاشرے کیلئے تباہی و بربادی کا سبب مانتے ہیں تو پھر میری کچھ گزارشات ہیں

وہ یہ کہ ایسی شدید مجبوری میں جب کہ ایک بڑی قباحت کو ختم کرنے کے لئے دوسرا کوئی راستہ نہ ہو، صرف چھوٹی قباحت کو اختیار کرنا ہی مسئلہ کا حل ہو تو پھر اس چھوٹی قباحت کو بھی اس طرح اختیار کیا جاءے کہ اس سے تیسری قباحت سامنے نہ آءے. یہاں پر وہ تیسری قباحت یہ ہے کہ اشتہار کے ذریعے جہیز کی تفصیلات بتانے، سر عام جہیز کے سامانوں کی نمائش اور اس میں علماء کی موجودگی کی وجہ سے غلط پیغام جاءے گا اور معاشرے میں اس سے جہیز کی رسم ختم ہونے کے بجائے اور بڑھے گی. کیونکہ لوگ یہ سمجھیں گے جہیز اچھی چیز ہے اسی وجہ سے علماء کرام اس میں شرکت کر رہے ہیں.

لہذا کیا ایسا نہیں ہو سکتا کہ ایسی غریب و یتیم بچیوں کی شادی اور دیگر تمام اخراجات کے لئے رقم مہیا کر دی جاءے. ان کے گھر والے اس رقم سے جو بھی ضروریات ہوں ان کا انتظام کر لیں . رقم دینے سے بھی شادی ہوگی اور اس طرح بھی مسئلہ کا حل ہوگا اور اچھی طرح حل ہوگا، غریب کو دینے سے ثواب بھی ملے گا اور جہیز کے نام سے چندہ دینے کی جو قباحت ہے اس کا ارتکاب نہیں ہوگا .

مگر کچھ لوگوں کو نمائش کی اتنی فکر ہے کہ اس پر اڑے ہوءے ہیں کہ نہیں، ہرگز نہیں، ہم تو جہیز کے لئے ہی چندہ کریں گے اور جہیز کا سامان جلسہ کر کے سب کو دکھلائیں گے. مگر مجھے سمجھ میں نہیں آتا کہ رقم دینے میں کیا حرج ہے، اور اگر جلسے میں سب کو بتانا ضروری ہی ہو تو کیا لسٹ پڑھ کر سنا دینے سے کام نہیں ہوگا کہ ہم نے جن لوگوں کو شادی و دیگر ضروریات کے لئے رقومات دی ہیں ان کے اسماء گرامی مکمل پتے کے ساتھ یہ ہیں.

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
%d bloggers like this: